A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 0

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 2

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

جب ایک سیالکوٹی جٹ نے ’’میم‘‘ سے شادی کا اعلان کیا تو چودھریوں نے پھڈا ڈال دیا، غالب اور اقبال کے بعد اردو کے سب سے بڑے ’’جٹ شاعر‘‘ کی شادی کا ایسا واقعہ جو انکی بیوی نے سنایا ہے،ان کا نام سنتے ہی آپ حیرت سے اچھل پڑیں گے

جب ایک سیالکوٹی جٹ نے ’’میم‘‘ سے شادی کا اعلان کیا تو چودھریوں نے پھڈا ڈال دیا، غالب اور اقبال کے بعد اردو کے سب سے بڑے ’’جٹ شاعر‘‘ کی شادی کا ایسا واقعہ جو انکی بیوی نے سنایا ہے،ان کا نام سنتے ہی آپ حیرت سے اچھل پڑیں گے

Mar 26, 2018 | 18:47:PM

لاہور(ایس چودھری)غالب اور اقبال کے بعد انقلابی شاعر فیض احمد فیض کو اردو کا بڑا شاعر تسلیم کیا جاتا ہے ۔انہوں نے ایک ’’میم ‘‘ایلس جارج سے شادی کی تھی جو بیسویں صدی کی تیسری دھائی میں رضا کار کے طور پرمتحدہ ہندوستان میں تشریف لائی تھیں ۔ان کی ایک بہن کی شادی سابق گورنرپنجاب سلمان تاثیر کے والد ایم ڈی تاثیر سے ہوئی تھی۔فیض احمد فیض ان دنوں ایم او کالج امرتسر کالج میں پڑھاتے تھے ۔فیض احمد فیض کانام اور شخصیت اپنے ہم عصروں میں نمایاں ہوچکا تھا ۔ایلس اور فیض احمد فیض میں دوستانہ مراسم قائم ہوئے تو دونوں نے شادی کا فیصلہ کرلیا لیکن فیض کے والدین نے اس پر سخت اعتراض اٹھادیا کہ وہ ایک ’’جٹ ‘‘کی ’’میم‘‘ سے شادی نہیں کرسکتے۔

ایلس فیض نے اپنی رحلت سے پہلے معروف ادیب شاعر افتخار عارف سے ایک انٹرویو کے دوران اس کا ذکر کرتے ہوئے بتایا تھا ’’ جب ہم دونوں کی دوستی ہوئی تو یہ ایک حد پر آکر رک گئی کیونکہ اس کے لئے شادی ضروری تھی۔میرے والدین خود پریشان تھے کہ تم ایک سال کے ہندوستان گئی ہو تو واپس آجاؤ لیکن میں نے ان سے فیض کے ساتھ شادی کا ذکر کیا تو وہ بھی سوچ میں پڑ گئے ،بہرحال کہا کہ ٹھیک ہے تم خوددیکھ لو۔ لیکن دوسری بات یہ ہوئی کہ فیض صاحب کے والدین جو سیالکوٹ کے چودھری تھے اوپر سے جٹ اور پنجابی تھے انہوں نے اس پر اعتراض لگا دیا کہ وہ ایک میم سے شادی کی اجازت نہیں دے سکتے کیونکہ پنجابی جٹ اور چودھری ہونے کی وجہ سے وہ غیر خاندان اور برادری سے باہر انکی شادی کو پسند نہیں کرتے تھے۔اس صورتحال کے پیدا ہونے پر ہم دونوں پریشان ہوئے،میرے والدین کو علم ہوا تو مجھ سے پوچھا جس پر میں نے کہا کہ اب میں انتظار کروں گی ۔انہی دنوں فیض صاحب کو کیمبرج میں پڑھائی کے لئے جانا تھا ،میں نے سوچا کہ یہ اچھا موقع ہے مگر فیض صاحب کے والدین اس پر سخت معترض تھے ۔اس دوران جنگ عظیم دوئم بھی شروع ہوگئی تھی۔پھر جب ہم سری نگر گئے تو وہاں ہم دونوں کا نکاح ہوا جو شیر کشمیر شیخ عبداللہ نے پڑھایا تھا ۔( مقبوضہ کشمیر کے سابق وزیر اعلٰی ) یہ دولوگوں کی بارات تھی جس میں ایک فیض کے بھائی اور دوسرا ان کا دوست تھا ۔ ‘‘

ایلس فیض نے فیض صاحب کو ٹوٹ کر چاہا تھا ،ان کی کامیاب ازدواجی زندگی کی وجہ یہ بھی تھی کہ ایلس فیض ذہنی طور پر فیض صاحب سے ہم آہنگ تھیں، جس کی فیض صاحب بے حد قدر کرتے تھے۔ایلس فیض نے قیام پاکستان کے بعد کئی برس تک سخت ترین آزمائش میں وقت گزارا، فیض صاحب پر بغاوت کا مقدمہ بھی بنا ،صحافتی اور پیشہ وارانہ ذمہ داریوں کے دوران انہیں سخت مالی اور ذہنی آزمائش کا زمانہ دیکھنا پڑا لیکن ایلس نے ماتھے پر شکن تک نہیں ڈالی بلکہ پاکستان میں انسانی خدمت خاص طور پرہیومن رائٹس کمیشن کے بانی رکن کی حیثیت سے بے مثال خدمات انجام دیں ۔ان کا انتقال 2003میں ہوا۔

مزیدخبریں