ہائیکورٹ کی رائے اعجاز کی درخواست پر فرانزک ایجنسی سے ہینڈ رائیٹنگ ایکسپرٹ کی رپورٹ طلب

ہائیکورٹ کی رائے اعجاز کی درخواست پر فرانزک ایجنسی سے ہینڈ رائیٹنگ ایکسپرٹ ...

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہوہائی کورٹ کے جسٹس ملک شہزاد احمد خان اورجسٹس مرزاوقاض رؤف پر مشتمل بنچ نے کرپشن کے الزمات میں گرفتارسابق سی ٹی او لاہور رائے اعجاز کی درخواست ضمانت پرفرانزنک سائنس ایجنسی سے ہینڈ رائٹنگ ایکسپرٹ کی رپورٹ طلب کرلی ہے۔درخواست میں چیئرمین نیب اور ڈی جی نیب لاہور کو فریق بنایا گیا ہے۔درخواست گزار کی جانب سے عدنان شجاع بٹ ایڈووکیٹ نے عدالت میں پیش ہوکر موقف اختیار کیا کہ ان کے موکل کا تعلق پولیس سروس سے ہے، ان کاپورا کیریئر بے داغ ہے، نیب نے جنوری 2018 ء میں انکوائری کا آغاز کیا، نیب کی جانب سے یکم جولائی 2014 ء سے 31دسمبر 2016 ء کے دوران رائے اعجاز پرکرپشن کے الزامات عائد کئے گئے، نیب کی جانب سے ٹیلی گراف، ٹیلی فون، گیس، پیٹرول، بجلی، عمارات کے کرائے اور انوسٹی گیشن فیس میں کرپشن کے الزامات لگائے گئے ، درخواست گزار یکم جولائی 2014 سے 15اپریل 2015 تک ڈی پی او تعینات رہے،درخواست گزار کی حد تک نیب تفتیش مکمل کر چکا ہے، ان کاموکل ہر قسم کی گارنٹی دینے کو تیار ہے، عدالت سے استدعاہے کہ ان کی ضمانت کی درخواست منظور کی جائے، اس کیس کی مزیدسماعت 9 اپریل ہوگی ۔

رائے اعجاز؍ رپورٹ طلب

مزید : صفحہ آخر