کورونا کے وارلیکن ایران سے دراصل پاکستانی زائرین کو کیوں واپس لینا پڑا؟ وزیراعلیٰ بلوچستان نے اعلان کردیا

کورونا کے وارلیکن ایران سے دراصل پاکستانی زائرین کو کیوں واپس لینا پڑا؟ ...
کورونا کے وارلیکن ایران سے دراصل پاکستانی زائرین کو کیوں واپس لینا پڑا؟ وزیراعلیٰ بلوچستان نے اعلان کردیا

  



کوئٹہ (ویب ڈیسک) وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال کا کہنا ہے تفتان میں پانچ ہزار زائرین کے لیے انتظامات کرنا بہت مشکل تھا، انتظامات کیسے کیے گئے، یہ ہم ہی جانتے ہیں۔ وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال نے اپنے ایک ویڈیو بیان میں کہا کہ ایران میں کورونا کی وبا پھیلنے کے بعد وہاں کی حکومت ہمارے زائرین کو اپنے پاس نہیں رکھ سکی لیکن ہم نے ایران سے آنے والے زائرین میں کوئی فرق نہیں کیا کہ ان کا تعلق کہاں سے ہے۔

انہوں نے کہا کہ زائرین کے سرحد پر آنے کے باعث ہمیں زائرین کو لینا پڑا، تفتان میں پانچ ہزار زائرین کو رکھنے کے لیے انتظامات کیسے کیے، وہ ہم ہی جانتے ہیں، وہاں موجود انتظامیہ اور ڈاکٹروں نے 100 گنا زیادہ کام کیا ہے۔وزیراعلیٰ بلوچستان نے کہا کہ تفتان کے حوالے سے بہت سی باتیں کی گئیں، مجھے اس حوالے سے سیاست دانوں، اینکر پرسنز اور تجزیہ کاروں پر افسوس ہے، ان لوگوں نے وہاں کے عوام، ڈاکٹروں اور انتظامیہ کا مذاق بنایا کہ لوگ 500 مہمان سنبھال نہیں سکتے، یہ تو وقت بتائے گا کہ کس نے کتنا کام کیا۔

جام کمال کا کہنا تھا کہ بہت سارے لوگوں نے ہمارا حوصلہ بڑھایا اور ہماری رہنمائی کی، گزارش ہے کہ قوم کی حوصلہ شکنی کے بجائے ان کی حوصلہ افزائی کریں، بہت سارے لوگ بہت اچھا کام کر رہے ہیں اور یہی قوم کے اصل ہیروز ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ یہ وائرس بہت ساری تبدیلیاں لا چکا ہے، ہمیں اپنے کردار اور اپنی سوچ میں بھی بہت ساری تبدیلیاں لانا ہوں گی۔

واضح رہے کہ تفتان کے پاکستان ہائوس اور کسٹم ہائوس میں قائم قرنطینہ مراکز میں ہزاروں افراد کو 14 روز کے لیے رکھا گیا تھا اور یہ قرنطینہ مراکز خیموں کی بستی پر مشتمل تھا۔تفتان میں قائم خیمہ بستی میں سہولیات کے فقدان کی نشاندہی بھی کی گئی تھی۔زائرین کی اکثریت میں مہلک وائرس کی تصدیق کے بعد تفتان میں قرنطینہ کے نام پر قائم خیمہ بستی آباد کرنے پر سوالات اٹھائے گئے تھے جس کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھی، اس کے بعد ملک میں پھیلنے والی وباء  کا مرکز بھی تفتان کو قرار دیا گیا تھا۔

مزید : علاقائی /بلوچستان /کوئٹہ