ایڈز سے متاثر ہ بچوں کو ناسور کہنے والے وزیر کو برطرف کیا جائے: بلاو ل بھٹو زرداری

  ایڈز سے متاثر ہ بچوں کو ناسور کہنے والے وزیر کو برطرف کیا جائے: بلاو ل بھٹو ...

  

لاڑکانہ(خصوصی نامہ نگار)پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ایچ آئی وی سے متاثرہ بچوں کو ناسور کہنے کے متنازع بیان پر وفاقی وزیر کو ہٹایا جائے، ایچ آئی وی کا مسئلہ صرف سندھ کا نہیں پورے پاکستان کا ہے، متاثرہ بچوں کو اکیلا نہیں چھوڑ سکتے، تمام وسائل بروئے کار لاتے ہوئے اس مرض کا مقابلہ کریں گے۔چیئرمین نیب کے حوالے سے پیپلزپارٹی کا موقف واضح ہے ، کسی صورت بھی کسی کی ذاتی زندگی میں دخل اندازی نہیں کرینگے ۔رتو ڈیرو میں تعلقہ اسپتال میں ایچ آئی وی کے متاثرہ مریضوں سے ملاقات کے بعدپریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ملک میں ایچ آئی وی اور ایڈز سے متعلق اتنی آگاہی نہیں ہے، ہم نے ملک میں ایچ آئی وی اور ایڈز سے متعلق آگاہی دینی ہے، یہ بات پھیلانی ہے کہ ایچ آئی وی اور ایڈز میں بہت فرق ہے، اب اسے سزائے موت نہیں سمجھا جاتا، دنیا میں ایچ آئی وی اور ایڈز کا علاج موجود ہے۔انھوں نے کہا کہ مرض کے خاتمے کے لیے ہم متعلقہ افراد سے رابطے میں ہیں، تمام وسائل بروئے کار لاتے ہوئے اس مرض کا مقابلہ کریں گے، سندھ حکومت ایچ آئی وی متاثرین کا علاج کرائے گی، اور ان کی زندگی بھر مدد کی جائے گی۔بلاول بھٹوزرداری نے کہا کہ ایچ آئی وی سے متاثرہ بچے اور والدین کا نام اور پتا ظاہر کرنا غلط ہے، متاثرہ افراد کے نام پتے ظاہر کرنے کو بالکل برداشت نہیں کریں گے، متاثرہ افراد اتنے ہی پاکستانی ہیں جتنے میں اور آپ، بچے کی زندگی سیاست سے بالا تر ہونی چاہیے۔انہوں نے کہاکہ ایچ آئی وی کے علاج کے لیے وزیر اعلی سندھ کو انڈومنٹ فنڈ بنانے کی ہدایت کر دی ہے، بیماری کی زد میں آنے والوں کے لیے علاج کی سہولت پہنچانی ہوگی تا کہ اس بیماری کو پھیلنے سے روکا جا سکے۔بلاول بھٹوزرداری نے کہاکہ مذہبی جماعتیں ہوں یا سیاسی ہمیں مل کر ایچ آئی وی کا مقابلہ کرنا ہے، کسی نے جان بوجھ کر ایچ آئی وی کو نہیں پھیلایا، ہماری کوشش ہے کہ اسکریننگ کو اور موثر کیا جائے۔بلاول بھٹو نے ایک صحافی کے سوال پر کہا کہ جلد ہی دوسرے لوگوں کے ساتھ دوسرا افطار کریں گے، ایک افطار کیا ہے اور بھی کرتے رہیں گے۔قبل ازیں، چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے لاڑکانہ میں تعلقہ اسپتال رتوڈیرو کا دورہ کر کے ایچ آئی وی سے متاثرہ بچوں سے ملاقات کی، وزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ، عذرا پیچوہو، مرتضی وہاب اور نثار کھوڑو بھی ان کے ہمراہ تھے۔بلاول بھٹو کو تعلقہ اسپتال رتو ڈیرو کے ڈاکٹروں کی جانب سے بریفنگ دی گئی، انھیں بتایا گیا کہ 32 دن میں رتو ڈیرو تعلقہ اسپتال میں 22 ہزار سے زائد اسکریننگ کی گئی، بلاول بھٹو نے تعلقہ اسپتال کی کارکردگی پر اظہار اطمینان کیا اور مزید کوششوں پر زور دیا۔دریں اثنا بلاول بھٹو نے ایچ آئی وی اسکریننگ کیمپ میں مریضوں سے ملاقات کی، انھوں نے ایچ آئی وی سے متاثرہ بچوں کے نئے قائم وارڈ کا بھی دورہ کیا، متاثرہ بچوں سے ملاقات کرتے ہوئے انھوں نے بچوں کے والدین کو حوصلہ دیا۔ بلاول بھٹو نے کہا کہ چیئرمین نیب کے حوالے سے پیپلزپارٹی کا موقف واضح ہے ،انہوں نے کہا کہ وہ کسی صورت بھی کسی کی ذاتی زندگی میں دخل اندازی نہیں کرینگے۔چیئرمین نیب کے حوالے سے وڈیوز صرف ان دو چینلزپر چلائی گئی جن کے مالکان کا وزیراعظم عمران خان سے ذاتی تعلق ہے ۔انہوں نے کہا کہ وڈیو اسکینڈل چیئرمین نیب کو بلیک میل کرنے کی کوشش ہے اور ہم اس کوشش کی مذمت کرتے ہیں۔بلاول بھٹو نے کہا کہ عمران خان نیب کو زورزبردستی اور بلیک میلنگ کرکے چلانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نیب گردی اور ایف آئی اے کے ذریعے نظام چلانے کی وجہ سے کاروباری افراد خوفزدہ ہیں ۔اسی لیے صدر زرداری نے کہا تھا کہ نیب اور معیشت ساتھ ساتھ نہیں چل سکتے۔بلاول بھٹو نے کہا کہ نیب کالاقانون ہے اور یہ قانون ایک آمر کی طرف سے بنایا گیاہے۔ نیب سیاسی انجینئرنگ کے علاوہ کچھ نہیں کررہااور نہ ہی کچھ کریگا۔قبل ازیں بلاول بھٹو کی سربراہی میں نوڈیرو ہاس لاڑکانہ میں ایڈز کے پھیلا سے متعلق اہم اجلاس منعقد ہوا جس میں سندھ ایڈز کنٹرول پروگرام کے منیجر ڈاکٹر سکندر میمن نے بلاول بھٹو زرداری کو خصوصی بریفنگ دی۔اجلاس میں وزیراعلی مراد علی شاہ ، صوبائی وزیر صحت عذرا پیچوہو ،مشیر اطلاعات سندھ مرتضی وہاب، کمشنر اور ڈپٹی کمشنر لاڑکانہ نے بھی اجلاس میں شرکت کی ۔ چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے ایچ آئی وی کے تدارک کے لئے مزید بھرپور اور جامع حکمت عملی اختیار کرنے پر زور دیا۔

مزید :

صفحہ اول -