ملک کی ترقی اور موجودہ صورتِ حال

ملک کی ترقی اور موجودہ صورتِ حال
 ملک کی ترقی اور موجودہ صورتِ حال

  



پاکستان کو بنے ہوئے70 سال سے زیادہ ہو چکے اور اِس دوران ہم نے تو یہی دیکھا کہ جب بھی حکومتیں ملکی ترقی کے لئے کچھ کرتی نظر آئیں حکومتوں کی بساط لپیٹ دی گئی۔ بھٹو، جونیجو، بے نظیر بھٹو اور میاں نواز شریف تمام کا تعلق سیاست سے تھا اور مُلک کو آگے جانے سے روک دیا گیا۔

آج کے حالات پر نظر ڈالتے ہیں تو بہت سی باتیں عیاں ہیں، حالات کو اس طرف لے جایا جا رہا ہے کہ لوگوں کے ووٹ سے بنی اسمبلیوں کو بند گلی میں دھکیل دیا گیا ہے۔اِس حکومت اور افواج نے مل کر دہشت گردی کو بڑی حد تک ختم کر دیا۔

کراچی میں امن و امان کی صورتِ حال میں بھی قدرے بہتری آئی۔ پٹرول، ڈیزل اور بجلی قیمتوں میں کمی جبکہ سپلائی میں اضافہ ہوا۔گزشتہ حکومتوں کے ادوار میں آٹے کے حصول کے لئے لائنوں میں لگے لوگ بھگدڑسے مر جاتے تھے۔ سی این جی پمپوں کے لئے لائنیں کسے یاد نہیں۔ سٹاک ایکسچینج کی انڈکس آسمان سے باتیں کر رہی تھی۔

سرمایہ کاری کا اندرونی و بیرونی رجحان فروغ پا رہا ہے جس سے بیروزگاری میں کمی آ رہی تھی، چین سے سی پیک کے معاہدے سے امریکہ سمیت پوری دُنیا میں کھلبلی مچ گئی تھی اور سرمایہ کاری کا رخ ہماری طرف تھا۔ بجلی کی کمی بھی پوری کی جا چکی تھی، مگر فوج اور سول حکومت کے درمیان غلط فہمیاں پھیلانے والے کچھ عناصر میڈیا کے ذریعے سے آگے آئے اور دھرنوں، لانگ مارچ اور دھاندلی کے شور جیسے مذموم ارادوں کا اظہار کرتے رہے اور پھر ترقی کرتی ہوئی اس قوم کے پیچھے پانامہ لگ گیا، جس سے ترقی کا وژن رکھنے والے لوگ ایک دفعہ پھر لابیوں کی زد میں آ گئے۔ آج کی صورتِ حال کا موازنہ اگر سابقہ واقعات سے کیا جائے تو ان میں کئی چیزیں ایک جیسی ہیں جن میں کرپشن سب سے اوپر ہے۔ سوال یہ ہے کہ ملک کو ترقی کی بلندیوں سے واپسی تو الگ پستیوں کے دائرہ میں دھکیل دینا اپنے ملک کے ساتھ ناانصافی ہے۔

اگر آج کے زمانے میں جمہوریت سے دور رہنا ہے تو اس گلوبل ویلیج میں آپ کیسے خود کو بچا سکتے ہیں اس لئے کئی پرانے سیاست دانوں کو مار کھانے کی بجائے اسمبلی کے کردار کو اُجاگر کرنا چاہئے اور افواجِ پاکستان اور آپس میں مل بیٹھ کر ان مسائل کا حل نکالنا چاہئے۔اب بس کریں، کیونکہ آدھے سے زیادہ عوام ذہنی دباؤ کا شکار ہو چکے ہے۔

محب وطن ہونے کا دعویٰ کرنے والے تمام لوگ اپنی اداؤں پر خود ہی غور کریں اور مُلک کو نقصان پہنچانے والے اقدامات سے گریز کریں۔ خدا پاکستان کو دشمن اور اندرونی دشمن دونوں سے محفوظ رکھے۔ آمین

مزید : کالم