دھرنوں،احتجاجی ریلیوں سے ٹریفک نظام درہم برہم، وارڈنز غائب

دھرنوں،احتجاجی ریلیوں سے ٹریفک نظام درہم برہم، وارڈنز غائب

ملتان(وقائع نگار) مذہبی جماعتوں کی جانب سے ضلع بھر کے مختلف علاقوں میں دھرنوں و احتجاجی ریلیوں اور مظاہروں کے باعث ٹریفک رواں دواں کا نظام درہم برہم ہو کر رہ گیا۔ شہری ٹریفک بلاک ہونے سے کئی کئی دیر رش میں پھنسے رہے۔ اور ٹریفک پولیس کو شہری کو ستے نظر آتے ہیں۔ (بقیہ نمبر22صفحہ12پر )

مذہبی جماعتوں کی جانب سے نکالی گئی ریلیوں اور دھرنوں کے باعث خانیوال روڈ، علی چوک سے چوک کمہاراں والا، مدرسہ انوارالعلوم، معصوم شاہ روڈ ، نیو سبزی منڈی روڈ، وہاڑی چوک، چوک بازار، متی تل روڈ ودیگر سمیت سے علاقے میں ٹریفک جام بلاک ہونے سے شہریوں کو متبادل راستہ اختیارکرنا پڑا۔ لیکن وہاں ٹریفک پلان نہ بنائے جانے کی وجہ سے بھی ٹریفک بلاک رہی اور آہستہ آہستہ ٹریفک چلتی رہی۔ شہر یوں نے الزام لگایا ہے کہ ٹریفک وارڈنز ٹریفک جام ہونے والی جگہوں پر اپنی ڈیوٹیاں دینے کی بجائے غائب نظر آئے ہیں۔ فیض آباد میں دھرنے مظاہرین سے کشیدگی کے سبب محکمہ صحت پنجاب نے نشتر ہسپتال ملتان سمیت صوبہ بھر کے سرکاری ہسپتالوں کو کسی بھی نا خوش گوار صورتحال سے نمٹنے کیلئے الرٹ رہنے کا حکم دیا ہے۔ جس کے باعث نشتر ہسپتال، شہباز شریف ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ودیگر سرکاری ہسپتالوں میں الرٹ رہے گا۔ جبکہ ڈاکٹرز، نرسیں وپیرا میڈیکل سٹاف ہائی الرٹ رہے گے۔ اور ہسپتالوں میں اضافی بستر مختص کیے گئے ہیں غیر حاضری کی صورت میں ڈاکٹرز، نرسیں، و ملازمین کیخلاف سخت محکمانہ کارروائی کی ہدایت بھی جاری کی گئی ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر