محکمہ اوقاف کا فزانز ک آڈٹ شروع ، افسران نے سرکل منیجرز کے دفاتر میں ڈیرے جمالئے

محکمہ اوقاف کا فزانز ک آڈٹ شروع ، افسران نے سرکل منیجرز کے دفاتر میں ڈیرے ...

  



لاہور(فلم رپورٹر)چیف جسٹس آف پاکستان کے احکامات کی تکمیل میں محکمہ اوقاف کے فرانزک آڈٹ کا کام شروع ہو گیاابتدائی طور پر متعدد آڈٹ آفیسرز نے لاہور کے مختلف سرکلز منیجرز کے دفاتر میں ڈیرے لگا لئے پہلے روز ہی آڈٹیٹرز کو مشکلات کا سامنا، محکمہ اوقاف میں حکومت پنجاب کے فنانشل رولز ابھی تک لاگو نہ ہونے کا انکشاف ڈرائنگ اینڈ ڈسبرسنگ آفیسرز کے اختیارات ڈائریکٹر فنانس کے پاس ہونے کی بجائے اسسٹنٹ ڈائریکٹر ایڈمنسٹریشن کے پاس ہونے کا بھی انکشاف ڈیلی ویجز ملازمین ترقیاتی منصوبے کے لئے رکھے جاتے ہیں، تاہم محکمہ اوقاف میں ڈیلی ویجز ملازمین بھرتی کرنے کا کوئی مروجہ قانون نہیں اوقاف میں ڈیلی ویجز ملازمین کو کس کے کہنے پر کس اختیار کے تحت بھرتی کیا گیا، اس بابت ریکارڈ دستیاب نہیں محکمانہ بجٹ بنانے، اور اس کی یوٹیلائزیشن کا طریقہ کار بھی حکومت پنجاب کے قوانین کے ساتھ ربط نہیں رکھتا، محکمہ کے پاس وقف 435 مساجد اور 529 وقف مزارات میں سے بیشتر کی حالت فوری توجہ کی منتظر ہے 85کروڑ سالانہ آمدن کا بڑا حصہ نان ترقیاتی مد میں خرچ ہونے کے معاملات بھی سامنے آ گئے۔

تنخواہوں اور الاؤنسز کی مد میں محکمہ اس وقت 715.36ملین روپے سالانہ خرچ کر رہا ہے محکمہ اوقاف میں تنخواہوں اور مراعات کی ادائیگیوں کے حوالے سے سب سے زیادہ اخراجات مذہبی امور ڈائرکٹوریٹ کے ہیں پنشن کی مد میں محکمہ 362ملین روپے خرچ کر رہا ہے،ٹریول اینڈ ٹرانسپورٹ چارجز اس کے علاوہ ہیں.

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...