حکومت شوگر کیس ایکٹ پر عملدرآمد کروانے میں ناکام کرشنگ شروع نہ ہونے سے کسانوں کو بھاری نقصان

حکومت شوگر کیس ایکٹ پر عملدرآمد کروانے میں ناکام کرشنگ شروع نہ ہونے سے ...

  



ملتان (سپیشل رپورٹر)ملک بھر میں شوگر ملز مافیا نے شوگر کین ایکٹ کی کھلم کھلاخلاف ورزی کرنا شروع کردی ہے جس کی وجہ سے گنے کسانوں کویومیہ لاکھوں روپے کاخسارہ برداشت کرنا پڑرہاہے گنے کی تیار فصل کی کٹائی کاعمل گزشتہ دوتین ہفتوں سے جاری ہے کٹاہوا گنا خشک ہونا شروع ہوگیاہے جبکہ گنا کی خریداری کاعمل تاحال شروع نہیں کیا گیاہے بلکہ کریشنگ کرنے کے عمل کوتاخیر کاشکار کرکے کسانوں کویومیہ بھاری نقصان پہنچایا جارہاہے شوگر کین ایکٹ کے (بقیہ نمبر22صفحہ12پر )

مطابق کریشنگ کاآغاز یکم نومبر سے شروع کرنے کاپابندبنایا گیاہے اگر شوگر ملز مالکان یکم نومبر سے گنے کی کرشنگ تاخیر سے کریں گئے تو فی یوم 5 لاکھ روپے ضلعی حکومت جرمانے کرنے کی مجاز ہے مگر ملک بھر میں شوگر ملز مافیا نے ابھی تک گنے کی کرشنگ شروع نہیں کی ہے بلکہ اب شوگر ملز کی جانب سے گنے کی کریشنگ یکم دسمبر سے شروع کرنے کااعلان کیا گیاہے اس پر ڈی سی شوگر ملوں کو فی یوم کے حساب سے 5لاکھ روپے جرمانہ کرسکتے ہیں مگر شوگر ملز مالکان بااثرہونے کی وجہ سے ضلعی انتظامیہ بھی آج تک شوگر کین ایکٹ پر عمل درآمد نہیں کرواسکی ہے اور نہ شوگر ملوں کویکم نومبر سے گنے کی خریداری کاحکم دیاہے اس وقت گنے کے کھیتوں میں گنا کی کٹائی زور شور سے جاری ہے گنا کھیتوں میں کٹا ہوا پڑاخشک ہورہا ہے اور گنا کا رس تک خشک ہورہا ہے جس سے کماد کاوزن کافی حد تک کم ہوجاتاہے پہلے شوگر ملز مالکان گناکی خریداری عمل کوسست کرنے کے لئے ملوں کے باہر گنے کی ٹرالیوں کو لمبی قطاروں میں انتظار کروایاجاتا تھا اب گنے کی خریداری تاخیر سے کرنے کے لئے کرشنگ کو لیٹ کیا جارہاہے اس سلسلے میں گنے کے کاشتکاروں نے ارباب اختیار سے مطالبہ کیا ہے کہ شوگرکین ایکٹ پر حکومت عمل درآمد کروائے۔

کرشنگ

مزید : ملتان صفحہ آخر