طلبا پر لاٹھی چارج کی تحقیقات کیلئے بننے والی پارلیمانی کمیٹی کا اظہار اعتماد

طلبا پر لاٹھی چارج کی تحقیقات کیلئے بننے والی پارلیمانی کمیٹی کا اظہار ...

  



پشاور(سٹی رپورٹر) پیپلز سٹوڈنٹس فیڈریشن نے 4اکتوبر کوپشاور یونیورسٹی میں طلبا پر لاٹھی چارج کی تحقیقات کیلئے بننے والی پارلیمانی کمیٹی کی رپورٹ منظر عام پر نہ آنے پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے پیپلزسٹوڈنٹس فیڈریشن کے صوبائی صدر راشد خان آفریدی اورڈپٹی جنرل سیکرٹری محمد نعیم خان نے مشترکہ بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہیونیورسٹی انتظامیہ نے طلباء پر لاٹھی چارج اور دیگر دفعات کے تحت جیل میں بند کر دیا تھا یونیورسٹی میں انتظامیہ اور فورسز کی جانب سے بے گناہ طلبا ء کو ماراگیا جس کی تحقیقات کیلئے حکومت نے ایک پارلیمانی کمیٹی بنائی گئی تاکہ کمیٹی تحقیقات کرکے ملوث افراد کو واقعی قرار سزا دی جا ئیگی لیکن آج تک وہ کمیٹی بھی انتظامیہ کی نظر ہو گی اور تحقیقات کرانے میں سست روی سے کام لیتی ہیں جبکہ گزشتہ روز پارلیمانی کمیٹی کی ممبر خاتون ایم پی اے نگہت اورکزئی نے بھی استعفیٰ دے دیا انہی کی مطابق کہ حکومت اور انتظامیہ طلباء کے مسائل حل کر نے میں دلچسپی نہیں لیتی اس لئے میں نے استعفیٰ دیدیا انہوں نے کہاکہ اس طرح کی صورتحال سے طلبہ میں مایوسی اور بے چینی بڑھ رہی ہے جو کسی بڑے نقصان کا پیش خیمہ بن سکتے ہیں انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت اس مسئلے کو سنجیدگی سے لے اور طلبہ کے حق میں فیصلہ کریں کیونکہ جامعہ پشاور کی انتظامیہ اور یونیورسٹی کیمپس پولیس نے 4 اکتوبر کو پرامن طلبہ پر جس طرح لاٹھی چارج کیا اس کی مثال نہیں ملتی انہوں نے کہا کہ 28 تاریخ کو متحدہ طلبہ محاذ پشاور یونیورسٹی صوبائی اسمبلی تک لانگ مارچ کرے گی جس کی ذمہ داری صوبائی حکومت اور پارلیمانی کمیٹی پر ہوگی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر