لاہور ہائیکورٹ نے پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف درخواست قابل سماعت قراردیدی

لاہور ہائیکورٹ نے پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف ...
لاہور ہائیکورٹ نے پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف درخواست قابل سماعت قراردیدی

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)لاہور ہائیکورٹ نے پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف درخواست قابل سماعت قراردیدی،عدالت نے وزارت داخلہ سے 28 نومبرکوتفصیلی جواب طلب کرلیااورپرویز مشرف کیس کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت کی تشکیل کی سمری بھی طلب کرلی،عدالت نے معاونت کیلئے اٹارنی جنرل کوبھی طلب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہورہائیکورٹ میں پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف درخواست پر سماعت ہوئی،جسٹس مظاہر علی اکبر کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے سماعت کی۔جسٹس مظاہر علی اکبر نے کہا کہ خبرہے اسلام آبادمیں بھی درخواست دائرہوئی ہے،خواجہ طارق رحیم نے کہا کہ وزارت داخلہ نے درخواست اسلام آباد ہائیکورٹ میں دائر کی ہے، جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی نے کہا کہ نظرثانی کی درخواست آپ کیوں نہیں دائر کرتے؟سپریم کورٹ نے خصوصی عدالت کو ہدایات دے رکھی ہیں،خواجہ طارق رحیم نے کہا کہ جب پرویز مشرف آئیں گے سب سے پہلے ٹربیونل کے فیصلے کا سامنا کریں گے۔

عدالت نے کہا کہ کوئی بندہ یہ کہہ دے کہ اسے ساراقانون آتا ہے تووہ بڑی غلطی فہمی میں ہے،جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی نے کہا کہ قانون مسلسل پڑھنے سے آتاہے اورروزانہ کی بنیاد پرنئے نئے کیسزآتے ہیں،کیاپرویزمشرف عدالت کی اجازت سے بیرون ملک گئے ہیں؟

لاہور ہائیکورٹ نے دلائل سننے کے بعد پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف درخواست قابل سماعت قراردیدی،عدالت نے وزارت داخلہ سے 28 نومبرکوتفصیلی جواب طلب کرلیااورپرویز مشرف کیس کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت کی تشکیل کی سمری بھی طلب کرلی،عدالت نے معاونت کیلئے اٹارنی جنرل کوبھی طلب کرلیا۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /پنجاب /لاہور