ایس ایچ او نے سول جج کے چیمبر میں فائرنگ کرکے اپنی بیٹی سے شادی کرنے والے نوجوان کو زخمی کر دیا

ایس ایچ او نے سول جج کے چیمبر میں فائرنگ کرکے اپنی بیٹی سے شادی کرنے والے ...

  



حیدرآباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)ایس ایچ او تھانہ حسین آباد محمد شریف کھوسو نے سول جج و جوڈیشل مجسٹریٹ نمبر 8حیدرآباد کے چیمبر میں فائرنگ کرکے اپنی بیٹی سے شادی کرنے والے نوجوان کو زخمی کر دیا،عدالتی سیکورٹی پر مامور پولیس اہلکار اور سیکیورٹی عملے نے ملزم کو پستول سمیت حراست میں لے لیا، نوجوان کو طبی امداد کے لئے سول ہسپتال منتقل کیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق  سول جج و جوڈیشل مجسٹریٹ نمبر 8حیدرآباد کے چیمبر میں حاضر سروس ایس ایچ او حسین آباد انسپکٹر محمد شریف کھوسو نے اچانک فائرنگ کرکے اپنی بیٹی انیلہ کھوسو سے شادی کرنے والے نوجوان صبور چانڈیو کو زخمی کر دیا، واقعہ کے بعد عدالت میں بھگڈر مچ گئی، جوڈیشل سیکیورٹی پر مامور پولیس اہلکار اور عملے نے انسپکٹر شریف کھوسو کو احاطہ عدالت سے پستول سمیت گرفتار کر کے کینٹ تھانے منتقل کر دیا گیا جبکہ لاڑکانہ کے رہائشی زخمی نوجوان صبور چانڈیو کو علاج کے لئے سول ہسپتال منتقل کیا گیا۔اطلاع ملنے پر ایس ایس پی حیدر آباد عدیل حسین چانڈیو جائے وقوعہ پر پہنچے اور صورتحال کا جائزہ لیا۔معلوم ہوا ہے کہ ایس ایچ او حسین آباد انسپکٹر محمد شریف کھوسو کی بیٹی مسماتۃ انیلہ کھوسو نے لاڑکانہ کے رہائشی نوجوان صبور چانڈیو سے رواں سال ہی پسند سے شادی کی تھی، شادی کے بعد شریف کھوسو اپنی بیٹی کو سسرال سے یہ کہہ کر واپس لے آیا کہ وہ اپنی بیٹی کی رخصتی دھوم دھام سے کریں گے، ذرائع کہ مطابق انیلہ کو حیدرآباد لانے کے بعد اس کے خاندان کی طرف سے انیلہ کھوسو کی طرف سے عدالت میں خلع کا مقدمہ دائر کر دیا گیا تھا، آج  درخواست خلع پر شنوائی کے دوران عدالتی چیمبر میں پری ٹرائل کے دوران مسماتہ انیلہ نے اپنے شوہر صبور چانڈیو کے ساتھ جانے اور مقدمہ واپس لینے کی خواہش ظاہر کی،اس صورتحال میں موقع پر موجود انیلہ کھوسو کے والد انسپکٹر محمد شریف کھوسو نے اچانک پستول نکال کر صبور چانڈیو پر فائرنگ کردی جس سے وہ پاؤں میں گولی لگنے سے زخمی ہو گیا۔

مزید : علاقائی /سندھ /حیدرآباد