”آرمی چیف کو توسیع آئین کے مطابق نہیں بلکہ ۔۔۔“معاون خصوصی برائے احتساب نے وضاحت کردی

”آرمی چیف کو توسیع آئین کے مطابق نہیں بلکہ ۔۔۔“معاون خصوصی برائے احتساب نے ...
”آرمی چیف کو توسیع آئین کے مطابق نہیں بلکہ ۔۔۔“معاون خصوصی برائے احتساب نے وضاحت کردی

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے کہاہے کہا آ رمی چیف کی تقرری آئین کے تحت ہوتی ہے اور ان کی سروس میں توسیع یاریٹائرمنٹ کوروکنا یہ آرمی ریگولیشنزکے تحت ہوتا ہے ۔

وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد وفاقی وزراءکے ساتھ میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے شہزاد اکبر نے کہا کہ وفاقی کابینہ فروغ نسیم کی محنت اور قابلیت کوسراہتی ہے ، آرمی چیف کی تقرری آئین کے تحت ہوتی ہے اور ان کی سروس یا ریٹائرمنٹ کوروکنا یہ آرمی ریگولیشنزکے تحت ہوتا ہے ۔انہوں نے کہاکہ کہ آرمی چیف کو لگانے کا فیصلہ برقرار ہے جبکہ ان کی مدت ملازمت میں توسیع کیلئے آرمی ریگولیشنز میں ترمیم کی گئی ہے ۔

اس موقع پر وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید کا کہنا تھا کہ پاکستان کو اس وقت جس قسم کے حالات کاسامنا ہے ، ان کاحالات کا مقابلہ وزیر اعظم عمران خان اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ مل کر کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ تمام اتحادیوں نے کابینہ کے جنرل قمر جاوید باجوہ کی مدت ملازمت میں توسیع کے فیصلے کی حمایت کی ہے ۔ آرمی چیف نے بھارت کوہرسطح پرمنہ توڑجواب دیا۔ تمام اتحادیوں نے وزیراعظم کے صوابدیدی اختیارکی حمایت کی ہے۔

مزید : قومی