فیصلہ کر چکے،ملک قرضوں کے سہارے نہیں چلائیں گے:فردوس عاشق اعوان

فیصلہ کر چکے،ملک قرضوں کے سہارے نہیں چلائیں گے:فردوس عاشق اعوان
فیصلہ کر چکے،ملک قرضوں کے سہارے نہیں چلائیں گے:فردوس عاشق اعوان

  



جدہ (ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہاکہترقی کی شرح کے حوالے سے اپوزیشن بے بنیاد پروپیگنڈا کر رہی ہے،فیصلہ کر چکے ہیں کہ ملک کو قرضوں کے سہارے سے نہیں چلائیں گے،او آئی سی اہم فورم ہے،دنیا میں اسلام فوبیا سے جڑا ایسا رجحان جنم لے رہا ہے جس میں انتہاپسندی عروج پر ہے،ناروے واقعہ قابل مذمت ہے، ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے کہ دنیا اسلام کے حوالے سے کس طرح سے سوچ رہی ہے؟اسلام کے تشخص کو صحیح انداز میں پیش کرنے کی ضرورت ہے,اُمت مسلمہ کو درپیش چیلنجز سے نمٹنے کیلئے حکمت عملی ایک ہونی چاہیے، حکومت عمران خان کی قائدانہ صلاحیتوں کے زیر سایہ پاکستان کو ریاست مدینہ کے اصولوں کے تحت قائم کرنے میں مصروف عمل ہے۔

جدہ میں پاکستانی کمیونٹی اور صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہاکہ حکومت نے پہلی مرتبہ آن لائن ویزہ سہولت کو یقینی بنایا,سیاحت کے فروغ کیلئے شمالی علاقوں میں عالمی معیار کے ہوٹل تعمیر کریں گے ,معیشت درست سمت میں گامزن ہے،ہم مقامی صنعت کو فروغ دینا چاہتے ہیں،ترقی کی شرح کے حوالے سے اپوزیشن بے بنیاد پروپیگنڈا کر رہی ہے۔اُنہوں نے کہا کہمقامی صنعت کو وقتی طور پر چیلنجز کا سامنا ہے،بیمار یونٹس کو وزیراعظم کی ہدایات کی روشنی میں فعال کیا جا رہا ہے۔اُنہوں نے کہا کہ پاکستان میں پچھلے 72 سالوں سے صرف اپنے اقتدار کو قائم رکھنے کے لیے کوئی ریفارمز نہیں کی گئیں،موجودہ حکومت کو تاریخ کے بدترین مالیاتی خسارے کا سامنا کرنا پڑا ہے،فیصلہ کر چکے ہیں کہ ملک کو قرضوں کے سہارے سے نہیں چلائیں گے، موجودہ حکومت عمران خان کی قائدانہ صلاحیتوں کے زیر سایہ پاکستان کو ریاست مدینہ کے اصولوں کے تحت قائم کرنے میں مصروف عمل ہے۔

ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہاو آئی سی بہت اہم فورم ہے،پاکستان اس کافاؤنڈرممبر ہے،پانچ براعظموں میں بسنے والے مسلمان اِس فورم سےکیا توقعات رکھتے ہیں؟او آئی سی کے زیر اہتمام ایک الگ ٹی وی چینل ہونا چاہیے،دنیا میں اسلام فوبیا سے جڑا ایک ایسا رجحان جنم لے رہا ہے جس میں انتہاپسندی عروج پر ہے۔اُنہوں نےکہاکہ حالیہ ناروے کاواقعہ جس میں قرآن پاک کی بےحرمتی کی کوشش کی گئی جو   انتہائی قابلِ مذمت ہے، ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے کہ دنیا اسلام کے حوالے سے کس طرح سے سوچ رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ قرآن کریم انسانی حقوق کے حوالے سے بہترین چارٹر ہے،پوری امت مسلمہ کے لئے جو چیلنجز ہیں ان چیلنجز سے نمٹنے کے لیے حکمت عملی بھی ایک ہونی چاہیے۔ انہوں نے کہاکہ تاریخ کے اوراق میں ہر ملک اور ان کی لیڈر شپ کا کردار لکھا جا رہا ہے۔پاکستان کا کردار اس حوالے سے بھی اہم ہے کہ پاکستان لا الہ اللہ کے نام پر بنا ہے،پاکستان ، سعودی عرب میڈیا تعلقات کے حوالے سے 2020اہم سال ہو گا۔

مزید : قومی