ضمانت کی مخالفت اسی صورت ہو سکتی ہے جب ملزم سے معاشرے کو نقصان کا اندیشہ ہو ،سپریم کورٹ نے کرپشن کیس میں ملزم کی ضمانت منظور کرلی

ضمانت کی مخالفت اسی صورت ہو سکتی ہے جب ملزم سے معاشرے کو نقصان کا اندیشہ ہو ...
ضمانت کی مخالفت اسی صورت ہو سکتی ہے جب ملزم سے معاشرے کو نقصان کا اندیشہ ہو ،سپریم کورٹ نے کرپشن کیس میں ملزم کی ضمانت منظور کرلی

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سکول کرپشن کیس میں سپریم کورٹ نے ملزم کی درخواست ضمانت منظور کرلی ،عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ضمانت کی مخالفت اسی صورت ہو سکتی ہے جب ملزم سے معاشرے کو نقصان کا اندیشہ ہو ،اگر نیب کوملزمان کے حوالے خدشات ہیں تو عدالت اس پر حکم جاری کر سکتی ہے۔نیب کو جنٹلمین احد چیمہ کو 3 سال جیل میں رکھنے سے کیا ملا؟۔

نجی ٹی وی ہم نیوز کے مطابق سپریم کورٹ میں جیکب آباد سکول کرپشن کیس کے ملزم کی ضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی،وکیل راجہ عامر عباس نے کہاکہ ملزم پر 34 لاکھ روپے کی کرپشن کا الزام ہے،جسٹس عمر عطا بندیال نے کہاکہ ملزمان کو حراست میں رکھنے کی مخصوص شرائط ہو سکتی ہیں، کیا اس کیس میں نیب کو ڈر ہے کہ ملزم بھاگ جائے گا؟ ،گزشتہ روزجسٹس مشیر عالم کی عدالت میں ایک ملزم کو ضمانت دی گئی ،جسٹس عمر عطابندیال نے وکیل سے استفسار کیا کہ کتنے عرصے بعد اس جنٹلمین کو ضمانت ملی ؟۔

وکیل نیب نے کہاکہ ملزم احد چیمہ کو2سال نو ماہ بعد سپریم کورٹ سے ضمانت ملی ،جسٹس عمر عطا بندیال نے کہاکہ نیب کو احد چیمہ کو 3 سال جیل میں رکھنے سے کیا ملا ؟ ،ضمانت کی مخالفت اسی صورت ہو سکتی ہے جب ملزم سے معاشرے کو نقصان کا اندیشہ ہو ،اگر نیب کوملزمان کے حوالے خدشات ہیں تو عدالت اس پر حکم جاری کر سکتی ہے۔

عدالت نے کہاکہ نیب مقدمات میں ضمانتوں کی مخالفت صرف اصول کی بنیاد پر ہی کرے ،ملزمان کی گرفتاری پرایک مقدمے میں پہلے ہی نیب سے معاونت کا کہہ چکے ہیں ، جسٹس مظاہر علی اکبر نے کہاکہ ضمانت دینے سے ملزم بری نہیں ہوتا ،ملزم ٹرائل کا سامنے کرکے ہی بری ہو سکتا ہے،جسٹس عمر عطابندیال نے کہاکہ اس کیس میں 4پانچ گراؤنڈز پر ملزم کو ضمانت دے رہے ہیں، سپریم کورٹ نے جیکب آباد سکول کرپشن کیس کے ملزم کی ضمانت منظور کرلی،ملزم کی ضمانت 5 ،5 لاکھ کی 2گارنٹیوں کے عوض منظور کرلی گئی۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -