حکومت منی بجٹ میں عوام پر 400ارب کا بوجھ ڈالنے جارہی ہے‘ مسلم لیگ (ن)

حکومت منی بجٹ میں عوام پر 400ارب کا بوجھ ڈالنے جارہی ہے‘ مسلم لیگ (ن)

  

لاہور(جنرل رپورٹر)پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال نے حکومت منی بجٹ کے ذریعے عوام پر 400ارب روپے کا بوجھ ڈالنے جارہی ہے، جو آئی ایم ایف سے معاہدے کے اندر گورنر سٹیٹ بینک اب پاکستان کی پارلیمنٹ سمیت کسی بھی عہدے کو جوابدہ نہیں ہے،سٹیٹ بینک کو‘ہاٹ منی سکینڈل’کی تحقیقات سے بچانے کیلئے خود مختاری دی جارہی ہے،گورنر سٹیٹ بینک پاکستان میں وائسرائے کی حیثیت اختیار کر لیں گے،چار آنے دیکر جوسٹیٹ بینک کی خود مختاری اپنے ہاتھوں میں لے سکتے ہیں وہ کل قرض کے بدلے ہمیں میزائل اور ایٹمی پروگرام بند کرنے کا بھی کہہ سکتے ہیں،قرضوں کا بوجھ ملک کی سلامتی کے لئے خطرہ بن گیا ہے،ہر پاکستانی 2 لاکھ 35 ہزار روپیکا مقروض ہوچکا ہے۔ عمران خان کو خود سمجھ جانا چاہیے کہ یہ کھیل ان کے کھیلنے کا نہیں ہے جو ملک کو مسلسل تقسیم کر رہا ہے نفرت کے بیج بو رہا ہے اورانتشار پھیلا رہا ہے وہ پاکستا ن کے کسی بھی دشمن کے مقابلے میں پاکستان کو کمزور کرنے کیلئے کم کردار ادا نہیں کر رہا،سیاست میں جب بھی ٹیکنالوجی کا استعمال ہوا نہ صرف ملک بلکہ جمہوریت کا بھی نقصان ہوا،عمران خان سچے ہیں تو استعفیٰ دے کر میدان میں آئیں،ٹروتھ اینڈ ری کنسلیشن کمیشن بنایا جائے اورقیام پاکستان سے لے کر اب تک جو بھی غلطیاں ہوئی ہیں ان کی تحقیقات کی جائیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے مریم اورنگزیب اور عظمیٰ بخاری کے ہمراہ پارٹی کے مرکزی سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔  دوسری جانب وزارت خزانہ کے ترجمان نے معیشت اور قرضوں سے متعلق مسلم لیگ(ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال کے دعوؤں کو گمراہ کن قرار دے دیا۔وزارتِ خزانہ کے ترجمان مزمل اسلم نے احسن اقبال کی پریس کانفرنس پر ردعمل جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ کورونا چیلنجز کے باوجود بیرونی قرضوں میں 15 فیصد کمی ہوئی۔انہوں نے کہا کہ احسن اقبال کی معیشت اورقرضوں پرکانفرنس گمراہ کن ہے کیونکہ جون2020میں بیرونی قرض107 فیصد پر تھے جو اب کم ہوکر 93 فیصد تک پہنچ گئے ہیں، تحریک انصاف کی حکومت میں بیرونی قرضوں کی شرح سب سے کم ہے۔

مسلم لیگ (ن)

مزید :

صفحہ آخر -