اوقات کاربڑھانے کامعاملہ،ڈاکٹرز کمیونٹی کا شدید ردعمل

     اوقات کاربڑھانے کامعاملہ،ڈاکٹرز کمیونٹی کا شدید ردعمل

  

 ملتان (  وقائع نگار)  محکمہ صحت پنجاب کی جانب سے پنجاب بھر کے ٹیچنگ ہسپتالوں میں 15 نومبر سے آوٹ ڈور ٹائمنگ صبح 8 سے شام 4 بجے تک کرنے کا نوٹیفکیشن (بقیہ نمبر10صفحہ6پر)

جاری کیا گیا تھا تاہم اس نوٹیفکیشن پر ڈاکٹروں کی جانب سے سخت ردعمل سامنے آیا جس کے بعد محکمہ صحت پنجاب کے واضح احکامات کے باوجود نشتر ہسپتال اور چلڈرن کمپلیکس انتظامیہ احکامات پر عمل درآمد کروانے میں ناکام رہی،گزشتہ روز ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن ملتان کے صدر ڈاکٹر مدثر سرانی کی سربراہی میں وفد نے سابقہ اوقات کار کے مطابق دوپہر دو بجے نشتر ہسپتال کا شعبہ آوٹ ڈور بند کروا دیا اسی طرح چلڈرن کمپلیکس میں بھی ینگ ڈاکٹرز نے او پی ڈی بند کروا دی اس حوالے سے ینگ ڈاکٹرز کے عہدیداران کا کہنا تھا کہ نوشیروان برکی کے ڈکٹیٹر شپ والے احکامات پورے پنجاب میں کوئی نہیں مانے گا، ہسپتالوں کی حالت زار بہتر کرنے،ڈاکٹروں کی تنخواہوں میں اضافے کی بجائے ایسے فیصلے حکومتی ناکامی کا ثبوت ہیں، ڈاکٹروں کی تعداد پہلے کم ہے اور پی جی آر ہاوس آفیسران 48 48 گھنٹے کی ڈیوٹیاں کرنے پر مجبور ہیں لیکن نئی بھرتیاں کرنے کی بجائے آوٹ ڈور کے اوقات کار بڑھانا سمجھ سے بالا تر ہے،اس حوالے سے ڈاکٹر یکجا ہو کر یہ جنگ لڑیں گے

ردعمل

مزید :

ملتان صفحہ آخر -