آزاد کشمیر میں قدرتی ماحول کو برقرار رکھنے کے لئے سردار تنویر الیاس نے کمر کس لی ، ہنگامی اقدامات کی ہدایات جاری کردیں

آزاد کشمیر میں قدرتی ماحول کو برقرار رکھنے کے لئے سردار تنویر الیاس نے کمر ...
آزاد کشمیر میں قدرتی ماحول کو برقرار رکھنے کے لئے سردار تنویر الیاس نے کمر کس لی ، ہنگامی اقدامات کی ہدایات جاری کردیں

  

مظفرآباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف(پی ٹی آئی) آزادکشمیرکے صدر اور سینئر موسٹ وزیر سردار تنویر الیاس خان نے کہا ہے کہ آئندہ100 سالہ اور 200سالہ چیلنجز کو مد نظر رکھ کر پلاننگ کی ضرورت ہے،ہمیں سوچنا ہوگا کہ آج ہماری ضرورت کیا ہے اور آئند ہ 100سالوں یا 200 سالوں میں ہماری ٹریفک اور اربنائزیشن کی کیا صورتحال ہوگی؟ انگریز دور میں جو سڑکیں بنائی گئیں وہ آج بھی زیر استعمال ہیں،اس وقت کی پلاننگ بہت عمدہ تھی،ہمارے کام سے ہمارا ضمیر مطمئن ہوگا تو تاریخ بھی ہمیں یاد رکھے گی،دیہی علاقوں میں بے ہنگم تعمیرات اور سیوریج نہ ہونے کی وجہ سے نیچرل لینڈ سکیپ تباہ ہورہا ہے،اگر ایسی صورتحال رہی تو آئندہ چند دہائیوں میں دیہی علاقوں میں بھی کنکریٹ کے پہاڑ بن جائیں گے اور پھر لاہور اور آزادکشمیر کے ماحول میں کوئی فرق نہیں رہے گا، قدرتی ماحول کو بچانے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کرنا ہوں گے،دیہی علاقوں میں بھی بلڈنگ ضابطے کے تحت ہی بننی چاہیں اور انجینئرز سےمنظور ہونی چاہئے،درختوں بالخصوص پھلداردرختوں کی کٹائی پرمکمل پابندی لگنی چاہیے,ایسے درخت لگائےجائیں جو  آزادخطہ کے ماحول سے مطابقت رکھتے ہوں،ہم لوگ پانی کی قدر نہیں کرتے، آزادکشمیر کا پانی قدرتی طور پر صاف اور صحت افزاء تھا جو کہ اب آلودہ ہو رہا ہے, محکمہ میں کوالٹی آف ورک بہتر بنانے کے لئے اہل ہیومن ریسورس کا اضافہ کیا جائے گا،زیرتعمیرمنصوبوں کی وجہ سے پیدا ہونے والے ماحولیاتی مسائل کے حل کے لئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کئےجائیں گے,گھروں،مارکیٹوں،اداروں میں بجلی،پانی،وسائل کےضیاع کو بچانے کے کے لیئے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے,بلنگ کے نظام کو بھی بہتر کیا جائے, سیوریج کا پانی دریا میں جارہا ہے تو اس کے لئے پلاننگ کی جائے,شہروں میں بلڈنگز کی تعمیر سے قبل ماحولیاتی مسائل، سیوریج،نکاسی، راستے / سڑک کا پہلو ہر گز مدنظر رکھا جائے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے محکمہ فزیکل پلاننگ و ہاؤسنگ کی جانب سے دی جانے والی محکمانہ بریفنگ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری فزیکل پلاننگ و ہاؤسنگ فیاض علی عباسی، چیف انجینئر نارتھ خواجہ عبدالباسط اورچیف انجینئر ساؤتھ سردار فراز احمد نے سینئر موسٹ وزیر کو بریفنگ دی۔ سردار تنویر الیاس خان نے کہاکہ پلاننگ اور مستقبل کے چینلجز سے نبردآزما ہونے کیلئے صحیح اعداد و شمار کا ہونا ضروری ہے،ٍلند ن، دوبئی و دیگر ترقی یافتہ ممالک میں ٹریفک اور قدرتی ماحول کو برقرار رکھنے کیلئے سخت قوانین بنائے گئے ہیں، زلزلہ2005ءمیں بھی سب سے زیادہ سرکاری عمارات تباہ ہوئیں جہاں بلڈنگز معیار کی نہیں تھی، بلڈنگز کی تعمیرکے دوران تعمیراتی میٹریل کا بھی معیاری ہونا انتہائی ضروری ہے۔

انہوں نے کہاکہ محکمہ پبلک ہیلتھ نے زیادہ توجہ صرف پانی کی فراہمی پر ہی دی لیکن سیوریج پر خاص توجہ نہیں دی گئی جس کی وجہ سے زیر زمین پانی بھی آلودہ ہونا شروع ہو گیا،  دنیا میں ہر بڑے شہر میں سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹس لگائے جاتے ہیں لیکن ہمارے ہاں اس پر بھی توجہ نہیں دی گئی۔ سینئر وزیر نے سیوریج کے نظام کو درست کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ سوریج لائنوں کو دریا میں ڈالنا بہت بڑا ظلم ہے،واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ لگا کر اسے درست کیا جائے گا،پانی کو آلودگی سے بچانے کے لیئے فلٹریشن کا اہتمام کیا جائے گا۔

انہوں نے کہاکہ وفاقی حکومت پانچ سو ارب کا ترقیاتی پیکج دینے جارہی ہے، فزیکل پلاننگ و ہاؤسنگ کو بھی ضروریات کے مطابق فنڈز ملیں گے،عمران خان فنڈز دینے کے معاملےمیں بہت سخی ہیں،انہوں نےگلگت بلتستان کےلوگوں کےلئےبھی370ارب اور آزادکشمیر کی تعمیر وترقی کیلئےتاریخ کاسب سےبڑامیگا ترقیاتی پیکج دینے جارہے ہیں، ٹاؤن پلاننگ کا پہلو بھی مد نظر رکھنا ضروری ہے،تنگ گلیوں کی وجہ سے ہنگامی حالات میں ریسکیو آپریشنز میں بہت دشواری اوربروقت رسائی ممکن نہیں ہوتی۔

انہوں نےکہاکہ فیاض علی عباسی تجربہ کارافسرہیں ان کی صلاحیتوں سےفائدہ اٹھائیں گے،محکمہ فزیکل پلاننگ و ہاؤسنگ انتہائی اہمیت کاحامل محکمہ ہے،پی پی ایچ کےجو منصوبےوسائل نہ ہونےکی وجہ سےشروع نہ ہو سکےیاتعطل کا شکار تھےان کی تکمیل جلد کی جائے گی،نیاپاکستان ہاوسنگ پروگرام کے تحت راولاکوٹ میں بہترین منصو بہ بنایا جائےگا۔اس موقع پرایڈیشنل چیف سیکرٹری فزیکل پلاننگ و ہاؤسنگ فیاض علی عباسی نےکہاکہ سردارتنویرالیاس خان  کی لیڈرشپ میں محکمہ کو آگےلیکرجائیں گے،اربن ڈویلپمنٹ پلاننگ پہلی ترجیح ہوگی،ہمارےپاس باصلاحیت ٹیم موجودہےجس کےساتھ بہتراندازمیں کام کریں گے۔

مزید :

علاقائی -آزاد کشمیر -مظفرآباد -