ڈاکٹروں کی غفلت سے چلڈرن ہسپتال میں بچہ ، میو میں لیسکو افسر جاں بحق ، ورثا کا احتجاج

ڈاکٹروں کی غفلت سے چلڈرن ہسپتال میں بچہ ، میو میں لیسکو افسر جاں بحق ، ورثا کا ...

لا ہور (کرائم رپورٹر) چلڈرن ہسپتال میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے دو ماہ کا بچہ دم توڑ گیا، میو ہسپتال میں بھی ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے لیسکو افسرجاں بحق ہو گیا۔تفصیلات کے مطابق رات گئے چلڈرن ہسپتال میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے دو ماہ کا بچہ احمد مختار جا ں بحق ہو گیا جس پر بچے کے ورثاء نے چلڈرن ہسپتال کے سامنے احتجاجاً سڑک بلاک کر کے ڈاکٹروں کے خلاف احتجاج کیا۔ لواحقین کے سراپا احتجاج ہو نے پر وزیر صحت نے نوٹس لیتے ہوئے 48گھنٹے میں رپورٹ طلب کر لی ہے ۔بتایا گیا ہے کہ دو سالہ بچے احمد مختار کو بخار کی حالت میں اس کے لواحقین اسے قصور سے چلڈرں ہسپتال شام پا نچ بجے کے قر یب لیکر پہنچے جہاں وہ ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت اور عدم تو جہ کی وجہ سے دم تو ڑ گیا جس پر لواحقین نے رات گئے فیروز پور روڈ بلاک کر کے ڈاکٹروں کے خلاف سخت نعرے بازی کر تے ہوئے ان کیخلاف مقد مہ درج کر نے کی درخواست کی ہے ۔تاہم وزیر صحت نے اس بات کا نوٹس لیتے ہو ئے چلڈرن ہسپتال کی انتظامیہ سے آئندہ چوبیس گھنٹے میں رپورٹ پیش کر نے کا حکم دیا ہے ۔بچے کی والدہ نے روز نامہ پاکستان سے گفتگو کر تے ہو ئے بتایا ہے کہ اس نے اپنا گائنی کارڈ بھی اسی ہسپتال کا بنوا رکھا ہے جب وہ اپنے بچے کو لیکر ہسپتال آئی تو اسے چیسٹ وارڈ میں چیک اپ کی ہدایت کی گئی جہاں ڈاکٹروں نے اسے پہلے ٹھیک قرار دیکر گھر چلے جا نے کو کہا تاہم بعد میں ان کے احتجاج پر اسے انجکشن لگایا گیا جس سے بچے کی موت واقع ہو گئی اس کا بچہ ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت کے با عث موت کے منہ میں گیا ہے اس لیے ڈاکٹروں کے خلاف قتل کا مقد مہ درج کیا جا نا چا ہیے۔دریں اثنا رات گئے میو ہسپتال میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے لیسکو افسر ہلاک، ہوگیا ،لواحقین نے واقعہ کے خلاف زبردست احتجاج کیا،تفصیلات کے مطابق ملتان روڈ کا رہائشی اقبال گجر لیسکو میں ایس او ایس کے طور پر کام کرتا تھا،گزشہ رات چوھدری اقبال گجر کو چیسٹ انفیکشن کے باعث ہسپتال لیجایا گیا،جہاں چیسٹ وارڈ کے ڈاکٹروں نے داخل کرنے سے انکار کردیا،جس پر مریض کو ایمرجنسی وارڈ لیجایا گیا،اور ایمرجنسی وارڈ کی انتظامیہ نے داخل کرنے سے انکار کردیا،جس کے باعث مریض دونوں وارڈز کے دوران شٹل کاک بنا رہا،اور آخر کار اقبال گجر نے موت و زندگی کی کشمکش میں رہنے کے بعد جاں دیدی،واقعہ پر لواحقین سراپا احتجاج بن گئے،اور ہسپتال کی انتظامیہ کے خلاف ایمرجنسی وارڈ کے سامنے زبردست احتجاج کیا،جس پر وزیر صحت حرکت میں آگئیں اور سیکرٹری صحت سے 24 گھنٹے میں رپورٹ طلب کرلی ہے۔

مزید : صفحہ آخر