جہانگیرہ میں مخالفین کی فائرنگ سے مجروح نوجوان ہسپتال میں چل بسا

جہانگیرہ میں مخالفین کی فائرنگ سے مجروح نوجوان ہسپتال میں چل بسا

تورڈھیر(نمائندہ خصوصی)جہانگیرہ میں مخالفین کی فائرنگ سے مجروح نوجوان ہسپتال میں چل بسا،اراضی کے تنازعہ پرملزمان باپ بیٹوں کی اندھادھند فائرنگ سے شدیدزخمی ہونے والامحمد حسین تیرہ دن موت وحیات کی کشمکش میں مبتلا رہا ،زخموں کا تاب نہ لاتے ہوئے جمعرات کی رات ایل آر ایچ پشاور میں دم توڑدیا،مقتول کو جمعرات کے روزجہانگیرہ میں سپردخاک کیا گیا، چار افراد کوزخمی اوردوکوموت کے گھاٹ اُتارنے والے نامزد ملزمان باپ بیٹے تیرہ دن گزرنے کے باوجود بھی گرفتارنہ ہونے پرغمزدہ خاندانوں کوشدید تشویش لاحق ہوگئی ہے،مقتولین کے لواحقین نے حکومت اورآئی جی پی خیبرپختونخواسے انصاف دلانے کی اپیل کی ہے۔ واقعات کے مطابق تحصیل لاہور کے نواحی علاقہ جہانگیرہ میں12 اکتوبربروزجمعہ اراضی کے تنازعہ پرمخالف فریق کی فائرنگ کے نتیجہ میں زخمی تیمورولددلاورخان ہسپتال لے جاتے ہوئے راستہ میں جاں بحق جبکہ زوردل،لطیف،زاہد اورمحمد حسین پسران دلیل خان اورمسلم خان ولددلاورخان زخمی ہوگئے تھے جن میں مجروح محمد حسین جمعرات کی رات لیڈی ریڈنگ ہسپتال میں تیرہ دنوں سے جاری طبی امدادکے باوجود بھی جان بر نہ ہوکرچل بسا یاد رہے کہ غمزدہ فریق کا قریبی رشتہ دارنیاز خان کیساتھ اراضی کا تنازعہ چلا آرہا تھا جس کاآپس میں مل بیٹھ کرتصفیہ کرنے اورمصالحت کیلئے مخالف فریق نیازخان نے انہیں جائے تنازعہ ووقوعہ واقع میاں عیسیٰ روڈ بلالیا تھا جہاں پر بحث وتکرارکے نتیجہ میں بلایا گیا فریق نیاز خان اوراسکے بیٹوں ظفیر،رویدخان ، سفیدخان اورخاطرکی اندھادھند فائرنگ کی زدمیں آگئے تھے مقتول محمدحسین کے والد دلیل خان اورمقتول تیمورکے والددلاورخان نے ملزمان کی تاحال گرفتاری نہ ہونے پر تشویش کااظہار کرتے ہوئے ملزمان کی جلد گرفتاری اورانصاف کیلئے حکومت اورپولیس کے اعلیٰ حکام سے اپیل کی ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر