فرانسیسی صدر نے مسلمانوں کو دکھ دیا، فیس بک اسلام مخالف مواد روکے: وزیراعظم

  فرانسیسی صدر نے مسلمانوں کو دکھ دیا، فیس بک اسلام مخالف مواد روکے: وزیراعظم

  

 اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے فیس بک کے بانی اور چیف ایگزیکٹو آفیسر(سی ای او) مارک زکر برگ کو خط لکھ کر فیس بک پر اسلام مخالف و اسلامو فوبیا پر مشتمل مواد پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا ہے۔وزیراعظم نے فیس بک پر اسلام مخالف مواد کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسا مواد نفرت، انتہا پسندی اور تشدد کی حوصلہ افزائی کر رہا ہے۔ وزیراعظم نے فیس بک کی جانب سے ہولو کاسٹ پر تنقید پر عائد پابندی کی تعریف کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ اسی طرح اسلامو فوبیا سے متعلق اور اسلام مخالف مواد پر بھی پابندی عائد کی جائے۔ہولوکاسٹ کی طرح آج مسلمانوں کو بھی دنیا کے مختلف ممالک میں نشانہ بنایا جارہا ہے۔ بھارت میں مسلمانوں کو قتل کیا جارہا ہے اور انہیں کورونا پھیلانے کا ذمہ دار قرار دیا جارہا ہے جو اسلاموفوبیا کا نتیجہ ہے۔فرانس میں اسلام کو دہشت گردی سے جوڑا جارہا ہے اور توہین آمیز خاکے شائع کرنے کی اجازت دی جارہی ہے۔ ان اقدامات سے فرانسیسی مسلمان تنہائی کا شکار ہوجائیں گے اور انتہا پسندی میں مزید اضافہ ہوگا۔دریں اثناء اپنے ایک ٹویٹ میں عمران خان نے کہا ہے کہ گستاخانہ خاکوں پر فرانسیسی صدر نے کروڑوں مسلمانوں کے جذبات کو مجروع کیا۔میکرون کو دنیا کو مزید تقسیم کرنے کی بجائے معاملات کو حل کرنا چاہیے تھا۔ دنیا کو تقسیم کرنے سے انتہا پسندی مزید بڑھے گی، لیڈر کی خاصیت انسانوں کو متحد کرنا ہوتا ہے۔ توہین آمیز خاکوں کے ذریعے اسلام پر حملے لاعلمی کا نتیجہ ہیں۔ لیڈر کو نیلسن منڈیلا کی طرح لوگوں کو متحد کرنا چاہیے۔ فرانسیسی صدر میکرون کو انتہا پسندوں کو موقع نہیں دینا چاہیے تھا جبکہ صدر میکرون کو دنیا کو تقسیم کرنے کے بجائے معاملات کو حل کرنا چاہئے تھا۔ گستاخانہ خاکوں کی حوصلہ افزائی سے اسلام اور پیغمبر اسلام کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ اسلام کو سمجھے بغیر نشانہ بنانے پر دنیا کے مسلمانوں کے جذبات مجروح کیے گئے۔ جہالت پر مبنی بیانات، نفرت اوراسلامو فوبیا انتہا پسندی کوفروغ دیں گے۔

وزیر اعظم 

مزید :

صفحہ اول -