خان گڑھ، پولیس اہلکاروں کاشہری کے گھردھاوا، لوٹ مار انکشاف 

  خان گڑھ، پولیس اہلکاروں کاشہری کے گھردھاوا، لوٹ مار انکشاف 

  

مظفرگڑھ(نامہ نگار)قانون کے محافظ ہی اپنا قانون بھول گئے، منشیات کی برآمدگی کے لیے جانیوالے پولیس اہلکاروں کی بغیر وردیوں کے چھاپہ کی ویڈیو منظرعام پر آگئی، اہلکاروں نے رضاکار کو سرکاری رائفل بھی تھمادی خان گڑھ پولیس تھانہ کے اہلکاروں نے موضع کمال پور(بقیہ نمبر37صفحہ6پر)

 میں محمد سلیم لاڑ کے گھر پر ریڈ کیا، جس کے دوران کچھ برآمد نہ ہوا تو شیر جوانوں  نے گھر کی تلاشی کے دوران ایک لاکھ پچانوے ہزار کی نقدی اٹھا لی اور گھر کے سربراہ سلیم لاڑ کو اپنے ہمراہ لے گئے، مقامی افراد نے ون فائیو پہ کال کی، بعدازاں سلیم لاڑ کی بیوی نزیراں نے تمام حالات سے تحریری درخواست کے ذریعے ڈی پی او مظفرگڑھ کو آگاہ کیا، دلچسپ بات یہ ہے کہ سادہ کپڑوں میں پولیس ملازمین کے ریڈ کی ویڈیو مبینہ ملزم سلیم لاڑ کے بیٹے نے بنا لی جس میں واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے کہ کس طرح سادہ پوش بلا وردی پولیس اہلکار سلیم پر تشدد اور گھر کی خواتین کو دھکے دے رہے ہیں، جبکہ ایک رضاکار نے اسلحہ اٹھا رکھا ہے جس کا وہ قانونی طور پر مجاز ہی نہیں ہے، اور ساتھ ہی چند پرائیویٹ افراد بھی ہیں، پولیس گردی کی اس بدترین مثال پر ڈی پی او مظفرگڑھ نے ڈی ایس پی صدر کو انکوائری آفیسر مقرر کیا ہے، جبکہ مقامی پولیس نے اس بارے کچھ بتانے سے انکار کیا ہے دریں اثناء  پولیس نے کارکردگی دکھانے کے لئے سلیم لاڑ کے خلاف 9 بی کا پرچہ درج کر لیا اور اس پر 205 گرام چرس ڈال کر گرفتار ی ڈال دی ہے۔ 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -