انسداد دہشت گردی کے آلات کرکٹرز کی نگرانی کیلئے استعمال ہونے لگے

انسداد دہشت گردی کے آلات کرکٹرز کی نگرانی کیلئے استعمال ہونے لگے
انسداد دہشت گردی کے آلات کرکٹرز کی نگرانی کیلئے استعمال ہونے لگے
سورس: Twitter

  

دبئی (ڈیلی پاکستان آن لائن) انسداد دہشت گردی کے آلات کرکٹرز کی نگرانی کیلئے استعمال ہونے لگے ہیں تاکہ بائیو سیکیور ببل کی خلاف ورزی سے حتی الامکان بچا جا سکے اور کھلاڑیوں کیساتھ ساتھ انڈین پریمیر لیگ (آئی پی ایل) بھی محفوظ طریقے سے اختتام پذیر ہو۔ 

نجی خبر رساں ادارے ایکسپریس نیوز کے مطابق بوتان عثمان نے دہشت گرد حملے کے بعد لوگوں کو تلاش کرنے، انڈسٹریل حادثات اور موسم کی پیشگوئی کے حوالے سے ٹیکنالوجی تیار کی، وہ اب ایک برطانوی آئی ٹی کمپنی کے چیف ایگزیکٹیو اور ان کی تیار کردہ ٹیکنالوجی آئی پی ایل بائیو ببل میں کھلاڑیوں کو محفوظ رکھنے کیلئے استعمال ہورہی ہے۔

بائیو سیکیور ماحول میں شامل تمام کھلاڑی اور سٹاف ممبرز نے گردن میں ایک بلوٹوتھ ٹریکر پہن رکھا ہوتا ہے جس سے ان کی نقل وحرکت کی نگرانی ہوتی رہتی ہے، وہ صرف ٹریننگ اور میچ کے دوران ہی اس ڈیوائس کو اتارتے ہیں، اگر کوئی بھی کھلاڑی وغیرہ بائیوببل سے باہر جانے کی کوشش کرے یا پھر اپنے لئے مقررہ زون سے باہر جائے تو اس ڈیوائس کی وجہ سے فوراً کمپنی کو الرٹ پہنچ جاتا جو اس کی آئی پی ایل کو رپورٹ کرتی ہے۔ 

بھارتی کرکٹ بورڈ بائیوببل کی خلاف ورزی کرنے والے کے خلاف نا صرف تادیبی کارروائی کرتا ہے بلکہ اسے 6 روز کیلئے قرنطینہ بھی اختیار کرنا پڑتا ہے۔ یہ ٹیکنالوجی اس سے قبل انگلینڈ کی ویسٹ انڈیز اور پاکستان کے خلاف ہوم ٹیسٹ سیریز میں بھی استعمال ہوئی، وہاں پر کاﺅنٹی میچز کے دوران جب آزمائشی طور پر تماشائیوں کو محدود داخلے کی اجازت دی گئی تب بھی نگرانی کیلئے اس ٹیکنالوجی کا استعمال ہوا۔

آئی پی ایل فرنچائز سن رائزرز حیدر آباد کے مینٹور لکشمن نے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے کہ تمام کھلاڑیوں اور سٹاف نے گلے میں ڈیوائس پہن رکھی ہے جس سے نقل و حرکت کا علم ہوتا ہے جبکہ اس کا مقصد سب کو عالمگیر موذی وبا سے محفوظ رکھنا ہے اور یہ ٹیکنالوجی بہت ہی اچھے سے کام کررہی ہے۔

مزید :

کھیل -