وزیراعلٰی کی ذاتی دلچسپی سے کڑا کڑ ٹنل کیلئے 6.284ارب منظور

  وزیراعلٰی کی ذاتی دلچسپی سے کڑا کڑ ٹنل کیلئے 6.284ارب منظور

  

          پشاور(سٹاف رپورٹر) وزیراعلی خیبرپختونخوا محمود خان کی ذاتی دلچسپی سے ضلع بونیر اور ملحقہ علاقاجات کیلئے کڑاکڑ ٹنل 2.1 کلومیٹر کی تعمیر کیلئے صوبائی ترقیاتی ورکنگ پارٹی سے 6.284 ارب روپے کی منظوری ہوگئی اور اس میگا منصوبے سے ضلع بونیر اور سوات کے درمیانی فاصلہ آٹھ کلومیٹر کم ہو جائے گا اور سفر میں 30 منٹ کی بچت ہو جائے گی۔ ان خیالات کا اظہار وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا کے معاون خصوصی برائے مواصلات و تعمیرات ریاض خان نے اپنے دفتر پشاور سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کیا۔ معاون خصوصی نے کہا کہ کڑاکڑ ٹنل کی تعمیر سے نہ صرف پہاڑی فاصلہ تین گناہ کم ہو جائے گا بلکہ علاقے میں انفراسٹرکچر کی ترقی بھی ہو جائے گی ریاض خان کا کہنا تھا کہ ضلع بونیر، سوات اور ملحقہ علاقاجات میں کڑاکڑ ٹنل کی تعمیر سے سیاحت اور معیشت کی بھرپور ترقی ممکن ہو جائے گی۔ ریاض خان کا کہنا تھا کہ کڑاکڑ ٹنل کی تعمیر سے تجارتی سرگرمیوں کو فروغ، سیاحتی، سماجی اور اقتصادی ترقی کے ساتھ ساتھ مقامی آبادی کو بھی بڑا فائدہ ہوگا۔ ریاض خان نے کہا کہ منصوبے کی تکمیل سے وہاں کے دور دراز پسماندہ و پہاڑی علاقے آپس میں منسلک ہوجانے سمیت سیاحت کیلئے نئے سپاٹ کی دریافت میں بھی مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت حسب وعدہ صنعت و تجارت کو فروغ دینے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے اور صنعت و تجارت سمیت علاقائی ترقی میں ایکسپریس وے اور ہائی ویز کا بھی اہم و بنیادی کردار ہے۔ معاون  خصوصی کا مزید کہنا تھا کہ کڑاکڑ ٹنل کی تکمیل سے ضلع بونیر کی ترقی میں ایک نئے دور کا آغاز ہو جائے گا انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ محمود خان کی کوششوں سے صوبائی حکومت کی توجہ ضلع بونیر کی ترقی پر مرکوز ہے جس سے ضلع بونیر کی ترقی میں ہمہ وقت اضافہ ہو رہا ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -