وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی ایرانی ہم منصب سے ملاقات ، کن اہم ایشوز پر گفتگو ہوئی ؟تفصیلات جانئے 

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی ایرانی ہم منصب سے ملاقات ، کن اہم ایشوز پر ...
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی ایرانی ہم منصب سے ملاقات ، کن اہم ایشوز پر گفتگو ہوئی ؟تفصیلات جانئے 

  

تہران(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نےایرانی وزیر خارجہ سےملاقات کی جس میں دو و طرفہ تعاون کے فروغ سمیت اہم علاقائی و عالمی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا ،شاہ محمود قریشی نے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ افغان عوام کو معاشی و انسانی بحران سے نکالنے کیلئے معاونت کرے،افغانستان کے حوالے سے پاکستان اور ایران ایک پیج پر ہیں،افغان عوام کی معاونت کیلئےمنجمد اثاثے فوری بحال کئے جائیں،افغانستان میں امن پورے خطے کےمفاد میں ہے،امن سےخطےمیں تجارتی سرگرمیوں کو فروغ ملےگا۔

وزیر خارجہ  شاہ محمود قریشی کا وزارت خارجہ پہنچنے پر ایرانی ہم منصب ڈاکٹر حسین امیر عبداللہیان نے خیر مقدم کیا،افغانستان کیلئے نمائندہ خصوصی محمد صادق اور ایران میں تعینات پاکستانی سفیر رحیم حیات قریشی بھی شاہ محمود قریشی کے ہمراہ تھے،ایرانی وزیر خارجہ نے شاہ محمود قریشی اور ان کے وفد کو تہران آمد پر خوش آمدید کہا ،وزیر خارجہ نے افغانستان کے ہمسایہ ممالک کے دوسرے وزارتی اجلاس میں شرکت کی دعوت پر ایرانی ہم منصب کا شکریہ ادا کیا،دونوں وزرائے خارجہ کے مابین دو طرفہ تعلقات ،باہمی دلچسپی کے کثیر الجہتی شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ سمیت اہم علاقائی و عالمی امور پر تبادلہ خیال ہوا۔

شاہ محمود قریشی نےایران کی اعلیٰ قیادت کی جانب سےمسئلہ کشمیر پر پاکستان کےاصولی موقف کی مسلسل تائید اورحمایت پرایرانی ہم منصب کا شکریہ ادا کرتےہوئےکہا کہ پاکستان، ایران کے ساتھ اپنے برادرانہ تعلقات کو خصوصی اہمیت دیتا ہے اور انہیں مزید مستحکم بنانے کیلئے پر عزم ہے،ایک پر امن اور مستحکم افغانستان، تمام ہمسایہ ممالک کیلئے یکساں اہمیت کا حامل ہے۔

21 اکتوبر کو کیے گئے اپنے دورہ کابل کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر خارجہ نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ افغان شہریوں کو درپیش معاشی و انسانی بحران سے نکالنے کیلئے ٹھوس اقدامات اٹھائیں، پاکستان، افغانستان کو تجارتی و سرحدی نقل و حرکت میں سہولیات کی فراہمی جاری رکھنے کیلئے پر عزم ہے، ایرانی وزیر خارجہ نے پاکستان کی جانب سے شروع کیے گئے علاقائی لائحہ عمل کی تشکیل کے اقدام کو سراہتے ہوئے،ایران کی میزبانی میں منعقدہ افغانستان کے ہمسایہ ممالک کے دوسرے وزارتی اجلاس میں شرکت پر، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا شکریہ ادا کیا،ایرانی وزیر خارجہ ڈاکٹر حسین امیر عبداللہیان نے شاہ محمود قریشی اور ان کے وفد کے اعزاز میں ظہرانہ بھی دیا۔

بعد ازاں اپنے ایرانی ہم منصب سے ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ افغانستان کی صورتحال کے حوالے سے پاکستان اور ایران کے نکتہ نظر میں مماثلت ہے،اس سلسلے میں دونوں ممالک ایک پیج پر ہیں،ایرانی ہم منصب سے ملاقات میں افغانستان اور علاقائی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے دیگر معاملات پر تفصیلی بات چیت ہوئی،دونوں ممالک علاقائی روابط کے فروغ اور معاشی استحکام کیلئے کوشاں ہیں ،ہم افغانستان میں امن و استحکام اور خوشحالی چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان میں امن پورے خطے کے مفاد میں ہے،افغانستان کے عوام گزشتہ چار دہائیوں کے دوران جنگوں سے تنگ آ چکے ہیں اور وہ افغان عوام خصوصی امن و استحکام کے مستحق ہیں،عالمی برادری افغانستان میں انسانی بحران سے نمٹنے میں معاونت کرے،افغانستان میں امن سے خطے میں تجارتی سرگرمیوں کو فروغ ملے گا،افغان عوام کی معاونت کیلئے منجمد اثاثے فوری بحال کئے جائیں۔

مزید :

قومی -