نیب نے غضنفر عباس چھینہ کے مبینہ ناجائز اثاثوں کی بابت رپورٹ داخل کردی 

  نیب نے غضنفر عباس چھینہ کے مبینہ ناجائز اثاثوں کی بابت رپورٹ داخل کردی 

  

 لاہور (نامہ نگار خصوصی) نیب نے حکمران جماعت کے ایم پی اے غضنفر عباس چھینہ کے مبینہ ناجائز اثاثوں کی بابت رپورٹ لاہور ہائی کورٹ میں داخل کردی ہے، چار صفحات پر مشتمل اس رپورٹ میں بھکر سے رکن صوبائی اسمبلی پر الزام لگایا گیا ہے کہ انہوں نے بے نامی دار جائیدادیں بنائیں نیب قانونی تقاضے پورے کرتے ہوئے غضنفر عباس چھینہ کے خلاف تحقیقات کر رہا ہے۔مجاز اتھارٹی نے ایم پی اے کے خلاف آمدنی سے زائد اثاثوں کی انکوائری کی منظوری دی۔غضنفر عباس چھینہ نے اہل خانہ سمیت بے نامی داروں کے نام پر زمینیں خریدیں۔ حکومتی جماعت کے ایم پی اے نے سرکاری زمین کے ریکارڈمیں بھی ردو بدل کیا،غضنفر عباس چھینہ نے پراپرٹی خریدنے اور اخراجات سے متعلق نیب کو جواب نہیں دیا۔ ایم پی اے کے بھائی محمد شیر بھی اس انکوائری میں ملزم ہیں،غضنفر عباس چھینہ کے اثاثے انکی آمدن سے مطابقت نہیں رکھتے۔رپورٹ میں استدعا کی گئی ہے کہ ایم پی اے غضنفر عباس چھینہ کی درخواست مسترد کی جائے،غضنفر عباس چھینہ نے اپنے خلاف آمدنی سے زائد اثاثوں کی نیب انکوائری کولاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر رکھا ہے جس کے جواب میں یہ رپورٹ داخل کی گئی ہے۔

ناجائز اثاثے

مزید :

صفحہ آخر -