سرحد چیمبر کا انڈسٹریز سی این جی سیکٹر کے تحفظات کو دور کرنے کا مطالبہ 

  سرحد چیمبر کا انڈسٹریز سی این جی سیکٹر کے تحفظات کو دور کرنے کا مطالبہ 

  

پشاور (سٹی رپورٹر)سرحد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر انجینئر مقصود انور پرویز نے وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس (GIDC) کے حوالے سے انڈسٹریز بشمول سی این جی سیکٹر کے تحفظات کو فوری طور پر دور کیا جائے اور اس حوالے سے جلد فیصلہ کیا جائے تاکہ کورونا لاک ڈاؤن سے متاثرہ مذکورہ انڈسٹریزبشمول  CNG سیکٹر کو ریلیف دیا جائے۔ انہوں نے پشاور ہائی کورٹ کے حالیہ فیصلہ کی روشنی میں GIDC کے حوالے سے ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی تشکیل دینے کے ساتھ ساتھ کمیٹی میں سرحد چیمبر کی جانب سے نامزد لوگوں کو بھی نمائندگی دی جائے۔ سرحد چیمبر کے صدر انجینئر مقصود انور پرویز نے کہا کہ خیبر پختونخواکے سی این جی سیکٹر سے وابستہ لوگوں نے پشاور ہائی کورٹ میں ایک اپیل جمع کی تھی جس میں درخواست گزارنے اعلیٰ عدلیہ سے اپیل کی کہ GIDC انہوں نے نہیں لیا ہے توہ ان پر لاگو نہیں ہوتا ہے لہٰذا وفاقی حکومت کی جانب سے GIDC کی مد میں بھاری رقم کی مختلف اقساط میں ریکوری کسی صورت قابل قبول نہیں اور مطالبہ کیا کہ اسے فوری طور پر موخر کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ پشاور ہائی کورٹ نے کیس کی سماعت کرتے ہوئے اوگرا کو ہدایات جاری کیں کہ وہ GIDC کے حوالے سے مکمل Audit رپورٹ کو آئندہ ایک ماہ میں پیش کرے۔ سرحد چیمبرکے صدر نے کہا کہ اوگرا کو ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی بنانے کا حکم صادر کیا سرحد چیمبر نے مذکورہ کمیٹی میں سرحد چیمبر کی جانب سے ماہرین پر مشتمل 3 لوگ تجویز کئے ہیں اور اوگراسے ان لوگوں کو بھی کمیٹی میں شامل کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔انہوں نے وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ گیس انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ سیس کے حوالے سے انڈسٹریز بشمول سی این جی سیکٹر جو کہ حالیہ کورونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے بری طرح سے متاثر ہوا ہے کو ریلیف دینے اور GIDC کے حوالے سے تحفظات کودور کیا جائے اور جلد سے جلد فیصلے کا اعلان کیا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ انڈسٹریلائزیشن ملک کی معاشی ترقی کی ضامن ہے۔ انہوں نے کہاکہ انڈسٹریز اس وقت شدید مالی بحران کیفیت سے دوچار ہے لہٰذا حکومت انڈسٹریلائزیشن کے فروغ کے لئے ایجنڈا کے تحت GIDC کی مد میں بھاری رقم کی وصولی کے فیصلہ کو فوری موخر کرے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -