فنانشل کرائمز انفورسمنٹ کی رپورٹ جاری، بھارت کے درجنوں بینک منی لانڈرنگ میں ملوث

فنانشل کرائمز انفورسمنٹ کی رپورٹ جاری، بھارت کے درجنوں بینک منی لانڈرنگ میں ...
فنانشل کرائمز انفورسمنٹ کی رپورٹ جاری، بھارت کے درجنوں بینک منی لانڈرنگ میں ملوث

  

نئی دہلی (ویب ڈیسک) فنانشل کرائمز انفورسمنٹ کی مشتبہ منی لانڈرنگ، دہشتگردی کی معاونت، ڈرگ ڈیلنگ اور مالی فراڈ کی رپورٹ جاری کردی گئی  اور کہاگیا ہے کہ  بھارت کے 40 سے زائد بینکس منی لانڈرنگ میں ملوث نکلے،بھارتی بینکوں کی 3201 غیرقانونی ٹرانزیکشنز کے ذریعے ایک ارب53 کروڑ ڈالر منی لانڈرنگ کی ۔

میڈیا رپورٹس  کے مطابق2010 سے 2017 کے دوران بھارت کے کئی بڑے بینکوں سے ایسی ٹرانزیکشنز ہوئیں جو نہایت مشکوک ہیں، یہ ٹرانزیکشنز 2 ٹریلین ڈالر کی مشکوک فہرست میں شامل ہیں ، آئی سی آئی جے نے ایسی عالمی ٹرانزیکشنز کی فہرست حاصل کی ہے جو 1999 سے2017 کے درمیان ہوئیں، اس ڈیٹا کا کچھ حصہ کنسورشیم کی ویب سائٹ پر جاری کیاگیا۔بھارت کے معاملے میں فانشل کرائمز انفورسمنٹ نیٹ ورک  کی فائلز میں مبینہ طورپر بھیجی یا وصول کی گئی 406ٹرانزیکشنز جس میں سٹیٹ بینک آف انڈیا سمیت تمام بڑے بینک شامل ہیں، بھارتی بینکس نے بیرون ممالک سے 482,181,226 ڈالر وصول کیے اور 406,278,962 ڈالر ملک سے ٹرانسفر کیے گئے ، ان ٹرانزیکشنز کو امریکی حکام نے مشکوک قراردیا۔

ان بینکوں میں  پنجاب نیشنل بینک ،کوٹک مہاندرا، ایچ ڈی ایف سی بینک ، کنارہ بینک ، انڈس لینڈ بینک ، بینک آف بروڈا  بینک شامل ہیں، بھارتی بینکوں نے 3201 غیر قانونی ٹرانزیکشنز کے ذریعے 1.53 بلین ڈالرز منی لانڈرنگ کی ۔ یہ بھی دعویٰ کیاگیا ہے کہ منی لانڈرنگ میں بھارتی نودرات کے سمگلر ملوث  ہیں اور سونے اور ڈائمنڈ کو بھی منی لانڈرگ  کیلئے استعمال کیا جاتاہے ، یہ رقم آئی پی ایل میں بھی استعمال ہونے کا دعوٰ یٰ کیا گیا ہے ۔ 

حالیہ یو این رپورٹ میں کیرالہ اور آسام کے دہشتگرد گروپوں کی موجودگی کی نشاندہی کی گئی ہے،بھارت منی لانڈرنگ میں بھارتی نوادرات کے سمگلرز بھی ملوث ہیں ،سونے اور ڈائمنڈ میں بھی منی لانڈرنگ کی گئی ۔

مزید :

بین الاقوامی -