رنگ بدلا یار نے وہ پیار کی باتیں گئیں  | حفیظ جالندھری |

رنگ بدلا یار نے وہ پیار کی باتیں گئیں  | حفیظ جالندھری |
رنگ بدلا یار نے وہ پیار کی باتیں گئیں  | حفیظ جالندھری |

  

رنگ بدلا یار نے وہ پیار کی باتیں گئیں 

وہ ملاقاتیں گئیں وہ چاندنی راتیں گئیں 

پی تو لیتا ہوں مگر پینے کی وہ باتیں گئیں 

وہ جوانی، وہ سیہ مستی، وہ برساتیں گئیں 

اللہ اللہ کہہ کے بس اک آہ کرنا رہ گیا 

وہ نمازیں ،وہ دعائیں، وہ مناجاتیں گئیں 

حضرت دل! اب نئی الفت سمجھ کر سوچ کر 

اگلی باتوں پر نہ بھولیں آپ وہ باتیں گئیں 

راہ و رسمِ دوستی قائم تو ہے لیکن حفیظؔ 

ابتدائے شوق کی لمبی ملاقاتیں گئیں 

شاعر: حفیظ جالندھری

(شعری مجموعہ:نغمہ زار؛ سالِ اشاعت1957)

Rang    Badla    Yaar   Nay   Wo   Piyaar   Ki   Baaten   Gaen

Wo   Mulaqaaten   Gaen   Wo    Chaandni   Raaten   Gaen

Pi   To   Leta   Hun   Magar   Peenay   Ki   Wo  Baaten   Gaen

Wo   Jawaani  ,   Wo   Siyah    Masti  ,   Wo    Barsaaten   Gaen

ALLAH    ALLAH    Keh    K   Bass   Ik   Aah    Karna   Reh   Gaya

Wo    Namazen  ,   Wo   Duaaen   ,   Wo    Manajaaten   Gaen

Hazrat-e-Dil    Ab    Nai    Ulfat    Samajh     Kar    Soch   Kar

Agli   Baaton    Par    Na    Bhoolen    Aap    Wo    Baaten   Gaen

Raah -o- Rasm-e-Dosti    Qaaim   To   Hay    Lekin    HAFEEZ

Ibtadaa-e-Shaoq    Ki    Lambi    Mulaqaaten   Gaen

Poet: Hafeez    Jalandhari

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -