کوئی تجھ سا حسیں نہیں ملتا | حفیظ جونپوری |

کوئی تجھ سا حسیں نہیں ملتا | حفیظ جونپوری |
کوئی تجھ سا حسیں نہیں ملتا | حفیظ جونپوری |

  

کوئی تجھ سا حسیں نہیں ملتا

خوب ڈھونڈھا کہیں نہیں ملتا

مر کے بھی آسماں کے ہاتھوں سے

چین زیرِِ زمیں نہیں ملتا

لیجئے مجھ سے دل کہ یہ سودا

ہر جگہ ہر کہیں نہیں ملتا

دیکھئے تو ہر اک جگہ ہے وہ

ڈھونڈھیئے تو کہیں نہیں ملتا

گفتگو اپنے دل سے کرتا ہوں

جب کوئی ہمنشیں نہیں ملتا

ہائے چوری چھپے بھی راتوں کو

اب وہ پردہ نشیں نہیں ملتا

میکدہ چھُٹ گیا ہے جب سے حفیظ

لطفِ صحبت کہیں نہیں ملتا​

شاعر: حفیظ جونپوری

 (انتخاب غزلیات حفیظ جونپوری:مرتبہ؛محبوب الرحمان فاروقی، سالِ اشاعت1989)

Koi   Tujh   Sa   Haseen   Nahen    Milta

Khoob   Dhoondo   Kahen   Nahen   Milta

Mar   K   Bhi   Aasmaan   K   Hathon   Say

Chain   Zer-e-Zameen   Nahen   Milta

Lijiay   Mujh   Say   Dil    Ka   Yeh   Saoda

Har   Jagah   Har   Kahen    Nahen    Milta

Daikhiay   To   Har    Ik    Jagah   Hay   Wo

Dhoondiay   To   Kahen   Nahen    Milta

Guftagu   Apnay   Dil   Say    Karta   Hun

Jab   Koi   Hamnasheen   Nahen    Milta

Haaey    Chori    Chhupay    Bhi    Raaton   Ko

Ab   Wo    Parda    Nasheen   Nahe n   Milta

Maikadaa    Chhutt    Gaya    Hay   Jab   Say   HAFEEZ

Lutf-e-Sohbat    Kahen     Nahen   Milta

Poet: Hafeez   Jaunpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -