بچھ رہے ہیں مرے پیشِ پا راستے  | حفیظ ہوشیار پوری |

 بچھ رہے ہیں مرے پیشِ پا راستے  | حفیظ ہوشیار پوری |
 بچھ رہے ہیں مرے پیشِ پا راستے  | حفیظ ہوشیار پوری |

  

 بچھ رہے ہیں مرے پیشِ پا راستے 

میرے قدموں سے نا آشنا راستے

جس طر ف دیکھو دامن کو پھیلاتے ہیں

میرے نقشِ قدم کے گدا راستے

ایک رستے کی بے انتہا منزلیں

ایک منزل کے انتہا راستے

اتنے بے نقشِ پا دشت حائل ہوئے

ہوگئے منزلوں سے جدا راستے

ہم بدلتے رہے رہنما رات دن

اور بدلتے رہے رہنما راستے

میں مسافر ، سفر میری قسمت حفیظ

میری تقدیر میں نارسا راستے

شاعر: حفیظ ہوشیار پوری

(ادبی رسالہ "افکار"(حفیظ ہوشیارپوری نمبر):سال1973)

Bichh   Rahay   Hen   Miray    Paish-e-Paa   Raastay

Meray   Qadmon   Say   Na   Ashnaa   Raastay

Jiss   Taraff    Dekho   Daaman   Ko   Phailaatay   Hen

Meray   Naqsh-e-Qadam   K   Gadaa    Raastay

Aik   Rastay   Ki   Be   Intahaa   Manzalen

Aik   Manzill   K    Be   Intahaa    Raastay

Itnay   Be   Naqsh-e-Paa   Dasht   Haail   Huay

Ho   Gaey   Manzilon   Say    Judaa    Raastay

Ham   Badaltay  Rahay    Rehnumaa   Raat   Din

Aor   Badaltay    Rahay   Rehnumaa    Raastay

Main    Musaafir   ,   Safar   Meri   Qismat   HAFEEZ

Meri    Taqdeer   Men    Na Rasaa   Raastay

Poet: Haafeez    Hoshiarpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -