وفا کی بات چھیڑی کبھی تم نے کبھی ہم نے  | حفیظ ہوشیار پوری |

وفا کی بات چھیڑی کبھی تم نے کبھی ہم نے  | حفیظ ہوشیار پوری |
وفا کی بات چھیڑی کبھی تم نے کبھی ہم نے  | حفیظ ہوشیار پوری |

  

وفا کی بات چھیڑی کبھی تم نے کبھی ہم نے 

بطرزِ دلبری تم نے برنگِ عاشقی ہم نے

نگاہِ شوق سے بخشی تھی جنہیں تابندگی ہم نے

تصور میں انہی جلووں سے مانگی روشنی ہم نے

جدائی کا سماں ہے آج تک اپنی نگاہوں میں

نہ کوئی بات کی تم نے نہ کوئی بات کی ہم نے

بتا اے بے خودی تو ہی زباں پہ کس کا نام آیا

کہو اے سننے والو! یہ کسے آواز دی ہم نے

ملے جب بھی نئے جلوے نظر آئے نگاہوں کو

دیارِحسن میں دیکھا نہ تم سا اجنبی ہم نے

بس اک ذوقِ نظر پر ناز تھا وہ بھی نہیں باقی

حفیظ اُن کے تغافل کو یہ دولت سونپ دی ہم نے

شاعر: حفیظ ہوشیار پوری

 (ادبی رسالہ "افکار"(حفیظ ہوشیارپوری نمبر):سال1973)

Wafa   Ki   Baat   Chhairri   Kabhi   Tum   Nay  Kabhi   Ham   Nay

Ba  Tarz-e- Dilbari   Tum   Nay   Ba Rang-e-Aashqi   Ham   Nay

Nigaah-e-Shaoq   Say   Bakhshi   Jinhen  Tabindagi   Ham   Nay

Tasawwar   Men   Unheen   Jalwon   Say   Maangi   Raoshni   Ham   Nay

Judaai   Ka   Samaan   Hay   Aaj   Tak   Apni   Nigaahon   Men

Na   Koi    Baat   Ki   Tum   Nay   Na   Koi   Baat   Ki   Ham   Nay

Bataa   Ay   Be   Khudi   Tu   Hi   Zubaan   Par   Kiss   Ka   Naam   Aaya

Kaho   Ay   Sunnay   Waalo   Yeh   Kisay   Awaaz   Di   Ham   Nay

Milay   Jab   Bhi   Naey   Jalway   Nazar  Aaey   Nigaahon   Ko

Diyaar-e-Husn   Men   Dekha   Na   Tum   Sa   Ajnabi   Ham   Nay

Bass   Ik   Zaoq-e-Nazar   Par   Naaz   Tha   Wo   Bhi   Nahen   Baqi

HAFEEZ   Un   K   Taghaafull   Ko   Yeh   Daolat   Sonp   Di   Ham   Nay

Poet: Hafeez    Hoshiarpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -