تاریکی کی دھول ہٹے اور تو آئے | حماد نیازی |

تاریکی کی دھول ہٹے اور تو آئے | حماد نیازی |
تاریکی کی دھول ہٹے اور تو آئے | حماد نیازی |

  

تاریکی کی دھول ہٹے اور تو آئے

دیواروں پر دھوپ پڑے اور تو آئے

چھم چھم بارش برسے ترسے کھیتوں پر

سوندھی سی خوشبو آئے اور تو آئے

تو آئے اور آنگن آنگن روشنی ہو 

روشنیوں کی نہر بہے اورتو آئے

خوشحالی کے گیت سنائیں ناچیں، گائیں

شادابی کا شہد گھلے اور تو آئے

روز امید کا دیا جلاؤں ،سو جاؤں

صبح سویرے آنکھ کھلے اور تو آئے

لفظوں کی مزدوری کرتے دن گزرے

شام ڈھلے،پھر دِیا جلے، اور تو آئے

شاعر: حماد نیازی

 (حماد نیازی کی وال سے)

Tareeki   Ki   Dhool   Hattay   Aor   Tu    Aaey

Dewaaron   Par   Dhoop   Parray   Aor    Tu    Aaey

Chham   Chham   Baarish   Barsay   Tarsay   Khaiton  Par

Soondhi   Si    Khushboo   Aaey   Aor    Tu    Aaey

Tu     Aaaey   Aor    Aangan    Aangan   Raoshni   Ho

Raoshnin   Ki    Nehr    Bahay    Aor    Tu    Aaey

Khush   Haali   K   Geet    Sunaaen  , Naachen  , Gaaen

Shadaabi   Ka    Shehd    Ghulay    Aor    Tu    Aaey

Roz    Ummeed   Ka   Diya    Jalaaun  , So   Jaaun

Subh   Sawairay   Aankh   Khulay    Aor    Tu    Aaey

Lafzon    Ki    Mazdoori    Kartay   Din   Guzray

Shaam   Dhalay  ,   Phir   Diya   Jalay   Aor    Tu    Aaey

Poet: Hammad    Niazi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -