آسماں تھے نہ خاکداں تھے ہم | حماد نیازی |

آسماں تھے نہ خاکداں تھے ہم | حماد نیازی |
آسماں تھے نہ خاکداں تھے ہم | حماد نیازی |

  

آسماں تھے نہ خاکداں تھے ہم

کچھ اگر تھے تو رائیگاں تھے ہم

آج کہتے ہیں کل کو ہم ہوں گے

کل کہیں گے کہ رفتگاں تھے ہم

ایک دن تھا کہیں گزارا دن

رات تھی اور بے نشاں تھے ہم

کوئی پڑھتا تھا اور نہ سنتا تھا

ایسے لفظوں کی داستاں تھے ہم

یوں بھی ہونا نہ ہونے جیسا ہے

ہم کہاں تھے اگر یہاں تھے ہم

کیا کہیں کس دیار مل پائیں

کوئی دریا تھا اور رواں تھے ہم

شاعر: حماد نیازی

 (حماد نیازی کی وال سے)

Aasmaan   Thay   Na    Khaakdaan   Thay   Ham

Kuchh   Agar   Thay   To   Raigaan   Thay   Ham

Aaj   Kehtay   Hen   Keh    Kall    Ko   Ham   Hon   Gay

Kall    Kahen   Gay   Keh   Raftagaan   Thay   Ham

Aik   Din   Tha   Kahen   Gzaara   Din

Raat   Thi   Aor    Be Nishaan   Thay   Ham

Koi   Parrhta   Tha    Aor   Na Sunta  Tha

Aisay   Lafzon   Ki    Dastaan   Thay   Ham

Yun   Bhi   Hona   Na    Honay    Jaisa   Hay

Ham   Kahan    Thay   Agar    Yahan   Thay   Ham

Kaya    Kahen   Kiss    Dayaar   Mill   Paaen

Koi   Darya   Thay   Aor   Rawaan   Thay   Ham

Poet: Hammad    Niazi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -