کبھی راستہ تو کبھی سفر نہیں کھل سکا | حماد نیازی |

کبھی راستہ تو کبھی سفر نہیں کھل سکا | حماد نیازی |
کبھی راستہ تو کبھی سفر نہیں کھل سکا | حماد نیازی |

  

کبھی راستہ تو کبھی سفر نہیں کھل سکا

مرا واقعہ سرِ رہگز نہیں   کھل سکا

میں وہ  لفظ ہوں جو کھلا تھا بس ترے سامنے

ترے بعد میں کسی اور  پر نہیں کھل سکا

کوئی یاد تھی کہ جو   آ  نسوؤں سے نہ مٹ سکی

کوئی راز تھا جو کھلا مگر نہیں کھل سکا

مرے سارے رنگ مری زمیں سے ہیں متصل

میں یہاں وہااں میں ادھر ادھر نہیں کھل سکا

وہی  ایک دن کہ  رواں دواں مرے تن میں ہے

وہی  ایک دن کہ جو عمر بھر نہیں کھل سکا

شاعر:  حماد نیازی

 (حماد نیازی کی وال سے)

Kabhi   Raasta   To   Kabhi   Hamsafr   Nahen   Khull   Saka

Mira   Waqiya   Sar-e-Rehguzar   Nahen   Khull   Saka

Main   Wo   Lafz   Hun   Jo   Khula   Tha   Bass   Tiray   Saamnay

Tiray   Baad   Main   Kisi   Aor   Par   Nahen   Khull   Saka

Koi   Yaad   Thi   Keh   Jo   Aansuon   Say   Na   Mitt   Saki

Koi   Raaz   Tha    Jo   Khula   Magar   Nahen   Khull   Saka

Miray   Saaray   Rang   Miri   Zameen   Say   Hen   Mutasill

Main   Yahaan   Wahaan   Main    Idhar   Udhar   Nahen   Khull   Saka

Wahi   Aik   Din   Keh   Rawaan   Dawaan   Miray Tan   Men   Hay

Wahi   Aik   Din   Keh   Jo   Umr   Bhar   Nahen   Khull   Saka

Poet: Hammad    Niazi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -