ایک سی ہے یوں تو کہہ لینے کو ہر اک دل کی بات | حمایت علی شاعر |

ایک سی ہے یوں تو کہہ لینے کو ہر اک دل کی بات | حمایت علی شاعر |
ایک سی ہے یوں تو کہہ لینے کو ہر اک دل کی بات | حمایت علی شاعر |

  

ایک سی ہے یوں تو کہہ لینے کو ہر اک دل کی بات

اہلِ محفل سے الگ ہے صاحبِ محفل کی بات

کشتیو! طوفاں سے گھبرا کر نہ لو ساحل کا رُخ

لوٹتی موجوں سے پوچھو رحمتِ ساحل کی بات

جس قدر بڑھتے ہیں آگے اور ہو جاتے ہیں دُور

راستے کے پیچ و خم میں کھو گئی منزل کی بات

کس سے دل کی بات کہیے جس پہ پڑتی ہے نظر

ا س کا چہرہ بول اُٹھتا ہے خود اپنے دل کی بات

جب بھی چھڑ جاتے ہیں شاعر اُلفتوں کے تذکرے

اکثر آجاتی ہے یاد اِک کشتۂ محمل کی بات

شاعر: حمایت علی شاعر

 (شعری مجموعہ: آگ میں پھول؛سال اشاعت،1956)

؂

Aik   Si   Hay   Yun    To   Keh    Lenay   Ko   Har   Ik   Dil   Ki   Baat

Ehl-e-Mehfill   Say   Alag   Hay   Saahib-e-Mehfill   Ki   Baat

Kashtiyo!   Tufaan   Say    Ghabraa   Kar   Na   Lo   Saahil   Ka   Rukh

Laott,ti   Maojon   Say   Poochho   Rehmat -e-Sahill   Ki   Baat

Jiss   Qadar   Barrhtay   Hen    Aagay   Aor   Ho   Jaatay   Hen   Door

Raastay   K   Paich-o-Kham   Men   Kho   Gai   Mamnzil   Ki   Baat

Kiss   Say   Dil   Ki   Baat    Kahiay   Jiss   Pe   Parrti   Hay   Nazar

Uss   Ka    Chehra    Bol    Uthta   Hay    Khud   Apnay   Dil   Ki   Baat

Jab   Bhi   Chhirr   Jaatay   Hen   SHAYAR   Ulfaton   K   Tazkaray

Aksar   Aa    Jaati   Hay   Yaad   Ik    Kushta-e- Mehmil   Ki   Baat

Poet: Himayat   Ali   Shayar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -