وہ ہے صیدِ انا ، جلتا رہے گا | حمیدہ شاہین|

وہ ہے صیدِ انا ، جلتا رہے گا | حمیدہ شاہین|
وہ ہے صیدِ انا ، جلتا رہے گا | حمیدہ شاہین|

  

وہ ہے صیدِ انا ، جلتا رہے گا

کہیں تنہا پڑاجلتا رہے گا

بجھاتے جاؤ لاکھ ان خواہشوں کو

کہیں کوئی سرا جلتا رہے گا

رہے گی روشنی راہِ طلب میں

مرا نقشِ وفا جلتا رہے گا

ہم اس کی چھاؤں  میں دم لے چلے ہیں

شجر یوں ہی تنہا کھڑاجلتا رہے گا

سفر میں حوصلے بجھنے لگے تو

کوئی حرفِ دعا جلتا رہے گا

منا  لاؤ  اُسے شاہین ورنہ

رہا جب تک جدا ،جلتا رہے گا

شاعرہ: حمیدہ شاہین

 (شعری مجموعہ: دشتِ وجود؛سال اشاعت،2006)

Wo    Hay   Said-e-Anaa    Jalta    Rahay   Ga

Kahen   Tanha   Parra    Jalta    Rahay   Ga

Bujhaatay   Jaao   Laakh   In   Khaahishon   Ko

Kahen   Koi    Siraa    Jalta    Rahay   Ga

Rahay   Gi   Raoshni   Raah-e-Talab   Men

Mira   Naqsh-e-Wafa   Jalta    Rahay   Ga

Ham   Uss    Ki    Chhaaon    Men    Dam   Lay    Chalay    Hen

Shajar    Yun    Hi    Kharra    Jalta    Rahay   Ga

Safar   Men     Haoslay    Bujhnay    Lagay   To

Koi    Harf-e-Dua    Jalta    Rahay   Ga

Manaa    Laao    Usay     SHAHIN    Warna

Raha    Jab    Tak     Juda   ,   Jalta     Rahay   Ga

Poetess:  Hamida    Shahin

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -