بھائی کوقتل کرنے پر مجرم کو سزائے موت، تین لاکھ جرمانہ

بھائی کوقتل کرنے پر مجرم کو سزائے موت، تین لاکھ جرمانہ

  

  ملتان (  خصو صی رپورٹر  ) ایڈیشنل سیشن جج ملتان غلام  مجتبی بلوچ نے سگے بھائی کو بے رحمی سے گولیاں مارکر قتل کرنے، دو بھائیوں اور مقتول کی بیٹی کو شدید زخمی کرنے کے(بقیہ نمبر30صفحہ6پر)

 مقدمہ میں ملوث مجرم کو جرم ثابت ہونے پر سزائے موت اور تین لاکھ روپے معاوضہ ادا کرنے سمیت دیگر سزاؤں کا حکم دیا ہے۔ جبکہ مقدمہ میں ملوث مجرم کی بیوی اور بیٹی کو ناکافی ثبوتوں پر بری کردیا ہے۔قبل ازیں فاضل عدالت میں پولیس تھانہ اولڈ کوتوالی کے مطابق مجرم محمد سجاد اس کی بیگم مسرت اور اس کی بیٹی فاطمہ کے خلاف مدعی سیف اللہ نے 12 جولائی 2020 کو مقدمہ نمبر 454 درج کرایا جس میں الزام عائد کیا کہ 12 جولائی دن آٹھ بجے ملزم سجاد نے اپنے سگے بھائی ظہوراحمد کو مکان سے مٹی اٹھانے سے منع کیا چونکہ بھائیوں کی آپس میں مکان کے تنازعہ پر لڑائی چل رہی تھی کہ اس دوران سجاد طیش میں آگیا اور اس نے سیدھے فائر ظہوراحمد پر کیے جو زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے اسپتال جاتے ہوئے راستے میں دم توڑ گیا ملزم نے اپنے بھائی شیر زمان،گل زمان اور بھتیجی انیکا ظہور کو بھی گولیاں ماریں جس سے وہ بھ شدید زخمی ہو گئے تھے تاہم عدالت نے تمام گواہوں اور ثبوتوں کی روشنی میں ملزم سجاد کو قتل کی دفعات کے تحت سزائے موت اور تین لاکھ روپے معاوضہ جبکہ اس کی بیگم اور بیٹی کو مقدمہ سے بری کرنے کا حکم دیا ہے ملزم کو اقدام قتل کی دفعات کے تحت سات سال قید اور پچاس ہزار روپے جرمانہ کی ادائیگی کا حکم دیا گیا ہے، ملزم دیت کی 27 لاکھ 77 ہزار 3 سو 53 روپے کا تیسرا حصہ 9 لاکھ 25 ہزار 784 بھی ادا کرنے کا پابند ہوگا ملزم کو تین لوگوں کو زخمی کرنے کی دفعات کے تحت بھی سزا سنائی گئی ہے۔ شیر زمان کو زخمی کرنے پر 20 ہزار دامان اور پانچ سال قید، گل زمان کو زخمی کرنے پر 15 ہزار دامان اور تین سال قید جبکہ بھتیجی انیکا کو زخمی کرنے پر 20 ہزار دامان اور پانچ سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -