ڈیرہ، وارداتیں ٹریس نہ کرنے پر دو ڈی ایس پیز کو وارننگ

ڈیرہ، وارداتیں ٹریس نہ کرنے پر دو ڈی ایس پیز کو وارننگ

  

ڈیرہ غازیخان (سٹی رپورٹر)آر پی او کی زیر صدارت ریجن کی کرائم میٹنگ ہوئی،وارداتیں ٹریس نہ کرنے پر 2ڈی ایس پیز کو سخت وارننگ دے دی گئی،ڈی پی اوز کو تھانہ کی سطح پر ”سٹنگ آپریشن“ شروع کرنے کاحکم(بقیہ نمبر52صفحہ7پر)

 دیاگیا،تفصیلات کے مطابق ریجنل پولیس آفیسر محمد فیصل رانا کی زیر صدارت ریجن کی کرائم میٹنگ منعقد ہوئی جس میں چاروں اضلاع ڈی جی خان،مظفر گڑھ،لیہ اور راجن پور کے ڈی پی اوز اور ایس پی انوسٹی گیشنز اور تمام پولیس سرکلز کے ایس ڈی پی اوز نے شرکت کی،اجلاس میں آر پی او نے قتل کی وارداتوں کے ملزمان کی عدم گرفتاری پر کروڑ سرکل کے ڈی ایس پی اور جتوئی پولیس سرکل کے ڈی ایس پی پر اظہار برہمی کرتے ہوئے نہیں وارننگ دی کہ اگر یہ وارداتیں ٹریس نہ ہوئی اور ان کے ملزمان گرفتار نہ ہوئے تو سخت محکمانہ احتسابی کارروائی ہو گی، انہوں نے ڈی ایس پی صدر ڈی جی خان کو تھانہ دراہمہ کے علاقہ میں ڈکیتی کی واردات ٹریس کرنے اور ملزمان کی گرفتاری کی ہدایت بھی کی،آر پی او نے چاروں اضلاع کے ڈی پی اوز کو ہدائت کی کہ تھانوں کی سطح پر کرپشن کے خاتمے کے لئے ”سٹنگ آپریشن“ شروع کیا جائے،ا س سلسلہ میں روزانہ کی بنیاد پر پراگرس سے آر پی ا وآفس کو آگاہ کیا جائے انہوں نے چہلم حضرت امام حسین کے موقع پر سخت حفاظتی انتظامات کی ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ شیڈولڈمرکزی روائتی اور لائسنسی جلوسوں کے متعین شدہ روٹس کو ڈی پی اوز پیدل چل کر آن گراؤنڈ چیک کریں گے،ٹربل پوائنٹس کی نشاندہی کر کے ان پر پیش بندی حفاظتی اقدامات فوری طور پر اٹھائے جائیں جبکہ پارکو پائپ لائن کی حفاظت اور تیل چور ی کے حوالے سے انسدادی اقدامات اٹھائے جائیں،بھکاریوں کے خلاف آپریشن کو تیز تر کر کے نتیجہ خیز بنایا جائے اس سلسلہ میں سوشل ویلفئر ڈیپارٹمنٹ کی معاونت لی جائے،قمار بازی کے اڈوں کے خلاف نتیجہ خیز قانونی کارروائیاں کی جائیں،عادی مجرمان کے خلاف قانونی کارروائیوں کو یقینی بنایا جائے،15کی کال پر فوری ریسپانس کویقینی بنانے کے لئے ایسا نظام وضع کیا جائے کہ عوام بروقت ریسپانس کے حوالے سے مطمئن ہوں،ڈی پی او لیہ اور راجن پور 15کالز کے فیڈ بیک کو بہتر بنائیں،اشتہاری ملزمان کی گرفتاری کے حوالے سے جاری مہم میں اے کیٹگری کے علاوہ بی کیٹگری کے ملزمان کی گرفتاری پر بھی توجہ دی جائے

وارننگ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -