ویانا:افریقی ممالک کو پرامن ایٹمی ایپلی کیشنز کی تربیت فراہم کرنے کے لیے عملی انتظام کا اہتمام

ویانا:افریقی ممالک کو پرامن ایٹمی ایپلی کیشنز کی تربیت فراہم کرنے کے لیے ...
 ویانا:افریقی ممالک کو پرامن ایٹمی ایپلی کیشنز کی تربیت فراہم کرنے کے لیے عملی انتظام کا اہتمام

  

ویانا۔(اکرم باجوہ)پاکستان اور بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی نے افریقی ممالک کو پرامن ایٹمی ایپلی کیشنز کی تربیت فراہم کرنے کے لیے عملی انتظام کا اہتمام کیا۔

 پاکستان اور بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی (آئی اے ای اے) نے ایک عملی انتظام پر دستخط کیے ہیں جس کے تحت افریقی ممالک کے سائنسدانوں اور ماہرین کو پاکستان ایٹمی توانائی کمیشن (پی اے ای سی) کی طرف سے جوہری ٹیکنالوجی کے پرامن استعمال کی تربیت دی جائے گی۔  اس طرح کے تربیتی پروگراموں میں توجہ کا بنیادی شعبہ زراعت اور انسانی صحت ہوگا۔

 عملی انتظامات پر دستخط جناب ہوا لیو ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل اور آئی اے ای اے کے شعبہ تکنیکی تعاون کے سربراہ اور چیئرمین پی اے ای سی محمد نعیم نے کیے۔ویانا میں بین الاقوامی تنظیموں میں پاکستان کے مستقل نمائندے سفیر پاکستان آفتاب احمد کھوکھر نے دستخط کی تقریب میں شرکت کی۔

پاکستان نے صحت اور زراعت کے شعبوں میں ایٹمی ٹیکنالوجی کے پرامن استعمال میں شاندار پیش رفت کی ہے اور آئی اے ای اے کے زیراہتمام دیگر ترقی پذیر ممالک کے ساتھ اپنی مہارت کا اشتراک کرنے پر آمادہ ہے۔  عملی انتظام اس طرح کے سہ فریقی تعاون کو ہموار اور تیز رفتار طریقے سے نافذ کرنے کے لیے تدریسی فریم ورک فراہم کرے گا۔ یہ بھی ایک ٹھوس مثال ہے کہ پاکستان کس طرح دنیا بھر میں سماجی و اقتصادی ترقی کے لیے ایٹمی ٹیکنالوجی کے پرامن استعمال کو فروغ دینے کے لیے آئی اے ای اے کے مینڈیٹ میں شراکت جاری رکھے ہوئے ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -