کراچی میں صفائی تو ہو نہیں رہی ، کے الیکٹرک ٹیکس بلوں میں کیوں وصول کر رہی ہے ، سندھ ہائیکورٹ کا ایڈمنسٹریٹر کراچی سے سوال

کراچی میں صفائی تو ہو نہیں رہی ، کے الیکٹرک ٹیکس بلوں میں کیوں وصول کر رہی ہے ...
کراچی میں صفائی تو ہو نہیں رہی ، کے الیکٹرک ٹیکس بلوں میں کیوں وصول کر رہی ہے ، سندھ ہائیکورٹ کا ایڈمنسٹریٹر کراچی سے سوال

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن ) بجلی کے بلوں میں کے ایم سی ٹیکس کی وصولی کے خلاف کیس کی سماعت کے دوران جسٹس حسن اظہر رضوی نے  ایڈمنسٹریٹر کراچی سے استفسار کیا کہ کراچی میں صفائی تو ہو نہیں رہی ہے ، کے الیکٹرک ٹیکس بلوں میں کیوں وصول کررہی ہے ؟۔

بجلی کے بلوں میں کے ایم سی ٹیکس کی وصولی کے خلاف کیس کی سماعت سندھ ہائیکورٹ میں ہوئی ،  ایڈمنسٹریٹر کراچی مرتضیٰ وہاب سندھ ہائیکورٹ میں پیش ہوئے۔ دوران سامعت جسٹس حسن اظہر رضوی نے استفسار کیا کہ  کے الیکٹرک ٹیکس بلوں میں کیوں وصول کررہی ہے ؟،  شہری ٹیکس نہ دیں تو انکی بجلی کٹ جائے گی ،کے ایم سی کے پاس طریقہ کار موجود ہے ، کیا کے الیکٹرک کی گاڑیوں پر کچرا پھینکا جارہا ہے ؟، کے ایم سی کا اپنا ریکوری سیل وصولی کرے ۔

مرتضیٰ وہاب نے عدالت کو بتایا کہ  کے ایم سی کا کام شہر میں کام کرنا ہے پارک بنانا ہے  جس پر عدالت نے ریمارکس دیے کہ  وصولی کے لیے صرف کے الیکٹرک بچا ہے ؟۔ مرتضی ٰوہاب نے  کہا کہ ہماری  سروسز میں سڑکیں ، پارکس اور فٹ پاتھ شامل ہیں ، عدالت نے استفسار کیا کہ  کیا شہری یہ سہولیات اپنے پیسوں سے حاصل کریں گے ؟ ،  یہ تو آپ کا کام ہے بنیادی سہولیات دیں ،کیا صوبائی حکومت احسان کررہی ہے ؟ سارا ٹیکس لے رہی ہے ،  ایک لاکھ روپے جمع ہوتا ہے تو کراچی کو اس کے بدلے میں کیا ملتا ہے ؟۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ سڑکیں ٹوٹی ہوئی ہیں پارکس تباہ ہیں ، سٹریٹ لائٹس نہیں ، ڈکیتیاں ہورہی ہیں، جب یہاں سہولیات دینے کی بات آتی ہے تو ایسا لگتا ہے خیرات دے رہے ہیں ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -علاقائی -سندھ -کراچی -