واپڈا ہاؤس میں ڈیم سیفٹی کے موضوع پر ورکشاپ کا انعقاد

واپڈا ہاؤس میں ڈیم سیفٹی کے موضوع پر ورکشاپ کا انعقاد

لاہور(کامرس رپورٹر)واپڈا، انسٹی ٹیوشن آف انجینئرز پاکستان اور پاکستان انجینئرنگ کانگریس کے اشتراک سے گزشتہ روز واپڈا ہاؤس میں ڈیم سیفٹی کے موضوع پر ورکشاپ کا انعقاد کیا گیا۔و رکشاپ میں واپڈا، انسٹی ٹیوشن آف انجینئرز پاکستان، پاکستان انجینئرنگ کانگریس، پاکستان جیو ٹیکنیکل انجینئرنگ سوسائٹی، پنجاب اری گیشن اور کمیونیکیشن اینڈ ورکس ڈیپارٹمنٹس اور مختلف یونیورسٹیوں سے تعلق رکھنے والے انجینئرز نے شرکت کی۔

انٹرنیشنل کمیشن آن لارج ڈیمز(آئی کولڈ) کی ڈیم ڈیزائن کمیٹی کے چیئرمین اور نیلم جہلم ہائیڈرو پاور پراجیکٹ کے پینل آف ایکسپرٹس کے ممبر ڈاکٹر مارٹن ویلینڈ(Martin Wieland) نے ورکشاپ میں شرکاء کوڈیم سیفٹی سے متعلق مختلف موضوعات پر لیکچرز دیئے ۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے دنیا بھر میں بڑے ڈیمز کی سیفٹی کے لئے کئے جانے والے انتظامات کو اختیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ پاکستان کی صورت حال پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان میں تربیلا اور منگلا جیسے بڑے آبی ذخائر ہیں ۔ ان ڈیموں کی سیفٹی کیلئے پہلے سے کئے جانے والے انتظامات کے ساتھ ساتھ سیفٹی کے نئے انتظامات بھی اختیارکئے جاسکتے ہیں ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ڈیم سیفٹی کیلئے سٹرکچر سیفٹی ، ڈیم سیفٹی مانیٹرنگ ، آپریشن سیفٹی اور ایمرجنسی پلاننگ کیلئے ہدایات ضروری ہیں۔اپنے لیکچرز کے دوران، ڈاکٹر مارٹن نے ڈیم سیفٹی کے جدید انتظامات، زلزلے کے دوران بڑے ڈیمز کی کارکردگی، موجودہ ڈیموں کے سیفٹی انتظامات اور موجودہ سیسمک ڈیزائن کے معیار پر تفصیلی بات چیت کی۔ انہوں نے دنیا بھر میں تعمیر کئے گئے مختلف گریویٹی ڈیم، مٹی کی بھرائی پر مشتمل ڈیم اور رولر کمپیکٹڈ ڈیم کی مثالیں بھی دیں۔قبل ازیں اپنے خیرمقدمی کلمات میں واپڈا ایڈوائیزر ڈاکٹر اظہارالحق نے شرکاء کو ورکشاپ کے اغراض و مقاصد سے آگاہ کیا۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ ڈاکٹر مارٹن کے لیکچرز سے انجینئرز کو اپنے فرائض کی انجام دہی میں مدد ملے گی۔ورکشاپ کے اختتام پر سوال و جواب کا سیشن ہوا جس میں ڈاکٹر مارٹن نے حاضرین کے پوچھے جانے والے سوالات کے

مزید : کامرس