مضاربہ اسکینڈل میں ملوث ملزم ارشاد اللہ جان کی ضمانت بعداز گرفتاری کی درخواست پر فیصلہ محفوظ

مضاربہ اسکینڈل میں ملوث ملزم ارشاد اللہ جان کی ضمانت بعداز گرفتاری کی ...

اسلام آباد (کرائم رپورٹر) اسلام آباد ہائی کورٹ نے مضاربہ اسکینڈل کے مرکزی ملزم مفتی احسان کی کمپنی کے منیجر ملزم ارشاد اللہ جان کی ضمانت بعداز گرفتاری کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا ہے جبکہ دوران سماعت نیب کی جمع کروائی گئی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ مسلم لیگ(ن) کے راہنما حنیف عباسی نے مضاربہ سکینڈل کے ملزم سے اپنی فارما سیوٹیکل کمپنی کے لئے غیر قانونی طور پر جنریٹر بھی حاصل کیا ہے گزشتہ روز جسٹس شوکت عزیز صدیقی اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل ڈویژن بنچ نے کیس کی سماعت کی نیب پراسیکیوٹر عدنان طاہر نے عدالت میں پیش ہو کر دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ملزم ارشاد اللہ جان مفتی احسان کی کمپنی میں منیجر کے عہدے پر تعینات تھا مفتی احسان کی گرفتاری کے بعد ملزم نے گاڑیاں اور دیگر سامان غیر قانونی طور پر فروخت کیا عدنان طاہر نے مزید دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ملزم ارشاد اللہ جان نے 16 گاڑیاں اپنے عزیز و اقارب کے نام پر منتقل کیں جس کا ریکارڈ نیب حاصل کر چکی ہے جبکہ چھ گاڑیاں نیب اپنے قبضے میں لے چکی ہے نیب پراسیکیوٹر نے عدالت میں رپورٹ پیش کرتے ہوئے انکشاف کیا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کے راہنما حنیف عباسی نے ملزم سے غیر قانونی طور پر اپنی فارما سیوٹیکل کمپنی کیلئے 36 لاکھ روپے کا جنریٹر 11 لاکھ روپے میں خریدا۔ بعدازاں عدالت نے دلائل سننے کے بعد ضمانت بعدازگرفتاری کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...