خیبر پختونخوا ، پولیو قطرے نہ پلانے والوں کی تعداد میں85فیصد اضافہ

خیبر پختونخوا ، پولیو قطرے نہ پلانے والوں کی تعداد میں85فیصد اضافہ

  

پشاور (این این آئی)خیبرپختونخوا ایمرجنسی آپریشن سینٹر (ای او سی) برائے پولیو کے ڈاکٹر اعجاز نے کہا ہے کہ بڈھ بیر میں پولیو مہم کے خلاف پروپیگنڈے کی وجہ سے صوبے بھر میں بچوں کو انسداد پولیو کے قطرے پلانے کی اجازت نہ دینے والے والدین کی تعداد میں 85 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ نجی ٹی وی کے مطابق ڈاکٹر اعجاز نے کہا کہ 3 روزہ مہم میں خیبرپختونخوا میں 7 لاکھ سے زائد خاندانوں نے ویکسینیشن سے انکار کردیا جبکہ گزشتہ ماہ ہونے والی پولیو مہم کے دوران انکاری کیسز کی تعداد 57 ہزار تھی۔انہوں نے کہا کہ ویکسین کے خلاف پھیلنے والی افواہوں کی وجہ سے انکاری کیسز کی تعداد میں خطرناک حد تک اضافہ ہوا ہے۔ڈاکٹر اعجاز نے کہا کہ صرف پشاور کے 8 لاکھ میں سے ایک لاکھ 64 ہزار خاندانوں نے بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے سے انکار کیا۔انہوںنے کہاکہ پولیو ویکسین کے خلاف افواہوں کی وجہ سے پشاور کی 24 یونین کونسلز میں انسداد پولیو مہم ملتوی کرنا پڑی۔انہوں نے کہا کہ پولیو ویکسین کے خلاف پروپیگنڈے کی وجہ سے پشاور اور دیگر اضلاع میں پولیو کے خاتمے کی کوشش متاثر ہوئی ہے۔ڈاکٹر اعجاز نے کہا کہ ای او سی رمضان کے بعد جون میں ایک نئی حکمت عملی کے ساتھ دوبارہ انسداد پولیو مہم شروع کرےگا۔انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ افواہوں کی وجہ سے قطرے نہ پینے والے بچے پولیو وائرس کا شکار ہوسکتے ہیں۔ڈاکٹر اعجاز نے کہا کہ ای او سی پولیو ویکسین سے متعلق مفروضوں اور والدین کے خدشات دور کرنے کے لیے مقامی اور مذہبی رہنماو¿ں سے بات چیت کرےگا۔

پولیو، کے پی کے

مزید :

علاقائی -