محکمہ خوراک میں اربوں روپے کی کرپشن ،لاڑکانہ میں تین گودام سیل

محکمہ خوراک میں اربوں روپے کی کرپشن ،لاڑکانہ میں تین گودام سیل
محکمہ خوراک میں اربوں روپے کی کرپشن ،لاڑکانہ میں تین گودام سیل

  

لاڑکانہ(ڈیلی پاکستان آن لائن) محکمہ خوراک سندھ میں اربوں روپے کی کرپشن کا معاملہ، نیب سکھر ٹیم کی لاڑکانہ میں کاروائی، تین گودام کو سیل کردیئے گئے،72 ہزار گندم کی بوریاں غائب کرکے اوپن مارکیٹ میں بیچنے کے انکشاف پر نیب ٹیم نے کارروائی کی جبکہ پانچ گوداموں کا ریکارڈ تحویل میں لے لیا ہے ،نیب سکھر کے مطابق لوٹے گئے ایک ارب بیس کروڑ روپے قومی خزانے میں جمع کرائے جائیں گے ۔

تفصیلات کے مطابق محکمہ خوراک سندھ میں اربوں روپیوں کی کرپشن کے بعد  نیب سکھر کے ڈپٹی ڈائریکٹر دانش اقبال نے شہر کے رحمت پور اور وگن روڈ پر قائم محکمہ خوراک کے تینوں گوداموں کو اپنی موجودگی میں سیل کروایا جبکہ کسی بھی نقل و حرکت کو روکنے کے لیے پولیس اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق سرکاری فوڈ گوداموں سے گندم کی نقل و حرکت پر پابندی کے باوجود لاڑکانہ میں گندم کی منتقلی جاری تھی جس کے باعث کراچی اور دادو کے بعد لاڑکانہ کے فوڈ گودام سے بھی سینکڑوں گندم کی بوریوں کے غائب ہو کر مل مالکان کو فروخت کر دی گئیں ،اسی معاملے پر محکمہ اینٹی کرپشن خاموش تماشائی کا کردار ادا کر رہی تھی جس پر نیب کی جانب سے چھاپہ مارکر لاڑکانہ کے تینوں گودام کو سیل کردیا ہے۔

دوسری جانب سندھ حکومت کی جانب سے گندم خریداری کا تاحال آغاز ہی نہیں کیا گیا ہے جس وجہ سے سندھ آبادگار بورڈ کی جانب سے 5 مئی کے روز لاڑکانہ میں دھرنا دے کر حکومت سندھ کا جنازہ نکالنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

مزید :

علاقائی -سندھ -سکھر -