پہلی سہ ماہی،یوریا کھاد کے پلانٹس کی 1.43بلین ٹن کی ریکارڈ پیداوار

  پہلی سہ ماہی،یوریا کھاد کے پلانٹس کی 1.43بلین ٹن کی ریکارڈ پیداوار

  

اسلام آباد (اے پی پی) رواں سال 2020ء کی پہلی سہ ماہی کے دوران یوریا کھاد کے پلانٹس نے 1.43 ملین ٹن کی ریکارڈ پیداوار حاصل کی ہے، خریف سیزن کے آغاز پر ملک میں 6 لاکھ ٹن یوریا کھاد کا سٹاک موجود ہے۔ کھاد تیارکرنے والی قومی صنعت کے اعداد وشمار کے مطابق جنوری تا مارچ 2020ء کے دوران فوجی فرٹیلائزر کمنپی نے 7 لاکھ 74 ہزار ٹن یوریا کھاد تیار کی ہے جبکہ اینگرو فرٹیلائزر کمپنی نے 7 لاکھ 74 ہزار ٹن یوریا کھاد تیار کی ہے جبکہ اینگرو فرٹیلائزر کی پیداوار 5 لاکھ 72 ہزار ٹن سے زیادہ رہی ہے۔ یوریا کھاد تیار کرنے والی صنعت کے حکام نے کہا ہے کہ رواں سال کے دوران یوریا کھاد کی پیداوار 6 ملین ٹن سے بڑھنے کی توقع ہے جو نہ صرف یوریا کھاد کی ملکی ضروریات کے لئے کافی ہو گی بلکہ محفوظ ذخیرہ بھی موجود رہے گا۔ انہوں نے کہا کہ رواں سال کے آغاز پر یوریا کھاد کا سٹاک 2 لاکھ ٹن سے زیادہ تھا جبکہ خریف سیزن سے قبل صنعتوں کے پاس مزید چار لاکھ ٹن کھاد دستیاب ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی یوریا کھاد کی سالانہ کھپت 5.8 ملین ٹن کے قریب ہے جبکہ رواں سال مقامی صنعت کی پیداوار 6 ملین ٹن سے زیادہ رہنے کی توقع ہے اس لئے مقامی ضروریات پوری کرنے کے بعد سال 2020ء کے اختتام پر بھی ملک میں یوریا کھاد کا اضافی ذخیرہ موجود ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ کھاد تیارکر نے والی مقامی صنعت کی سالانہ پیداواری صلاحیت 7 ملین ٹن سے زیادہ ہے جو نہ صرف مقامی طلب کو پورا کر سکتی ہے بلکہ ضرورت سے زائد کھادیں برآمد کرکے قیمت زرمبادلہ بھی کمایا جا سکتا ہے۔

مزید :

کامرس -