گرمیاں،چلڈرن کمپلیکس ڈائریامریضوں سے فل

گرمیاں،چلڈرن کمپلیکس ڈائریامریضوں سے فل

  

ملتان)وقائع نگار)گرمیوں کے آتے ہی خطرناک وبا نے ننھے منے بچوں کو اپنے نشانے میں رکھ لیا ہے۔  ہسپتالوں کے بچہ وارڈز اور چلڈرن کمپلیکس ملتان ڈائریا کے مریضوں سے بھر گئے ہیں رپورٹ کے پیڈز فزیشنز اور ڈاکٹرز   نے خبردار کیا ہے کہ اسپتالوں میں  (بقیہ نمبر1صفحہ6پر)

80 فیصد بچے ڈائریا کے مرض میں مبتلا ہوکر آرہے ہیں انہوں نے کہا کہ  یہ تشویشناک صورتحال ہے اگر والدین کی جانب سے احتیاط نہ کی گئی تو حالات مزید خراب ہوسکتے ہیں۔ ڈاکٹرز نے بتایا کہ اس وقت وارڈز میں ٹوٹل 140 جبکہ چلڈرن کمپلیکس میں 24 گھنٹوں میں 40 بچے ڈائریا سے زیر علاج ہیں اور تمام بچوں کی حالت ٹھیک نہیں ہے۔کیونکہ جن بچوں کی حالات نارمل ہو انہیں او ار ایس اور ادویات دے کر گھر بھیج دیا جاتا ہے۔طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ڈائریا  مرض سے بچا کے لیے والدین کو چاہیے کہ وہ بچوں کو ابلا ہوا پانی پلائیں اور گھریلو اشیا کو ڈھانپ کر رکھیں اور کوشش کی جائے کہ بچوں کو گھر میں تیار کی گئی اشیا ہی کھلائی جائیں۔ڈاکٹرز کے مطابق ایسے موسم میں بچوں کو باہر کی چیزیں کھلانا ان کی صحت کے لئے مضر ہے۔انہوں نے کہا کہ گرمی کے موسم میں گھروں کو صاف ستھرا رکھنا بھی ضروری ہے تاکہ بیماریوں سے محفوظ رہا جاسکے۔ ڈائریا ہونے کی صورت میں نمکول یا او آر ایس والا پانی بار بار پلایا جائے تاکہ بچوں کے جسم میں پانی کی کمی نہ ہو۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -