ریڈیو پاکستان لاہور کا شاعر احمد فراز کو خراج عقیدت

ریڈیو پاکستان لاہور کا شاعر احمد فراز کو خراج عقیدت

  

لاہور( فلم رپورٹر)ریڈیو پاکستان لاہور نے معروف شاعراحمد فراز کی برسی کے موقع ان کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے خصوصی ٹرانسمیشن کو ایف ایم 93 ،موسیقی کے چینل دھنک ایف ایم 94 اور میڈیم ویو 630 کے نیٹ ورک کے توسط سے سامعین تک پہنچایا۔ٹرانسمیشن کے پروگراموں کو ڈپٹی کنٹرو لر دھنک ایف ایم 94جاوید اختر اور پروگرام منیجر ایف ایم 93ومیڈیم ویو630 حافظ حفظ الرحمان کی نگرا نی میں تیار کیا گیا تھا جن آغاز خصوصی فیچر سلسلے توڑ گیا وہ سبھی جاتے جاتے سے ہوا جس کے راوی خورشید علی جبکہ تحریر اور پروڈکشن مدثر قدیر کی تھی فیچر میں ناصر بشیر،خالد شریف اور قائم نقوی کے تاثرات شامل تھے جنہوں نے احمد فراز کے فکر وفن پر مدلل گفتگو کی جبکہ فیچر کے اہم حصہ میں نزاکت شکیلہ کی آواز میں احمد فراز کی شاعری کو شامل کیا گیا جس کے باعث اس کی صوتی اہمیت میں اضافہ ہوا،اس کے بعد احمد فراز انسانی حقوق کے علمبردار کے موضوع پر ایک مزاکرہ نشر ہوا جس کے میزبان حامد ولید اور شریک گفتگو تھے میاں سیف الرحمان اور اقبال حسین لکھویرا جبکہ اسے پروڈویوس کیا تھاعامر سعید نے اس کے علاو بیاد فراز کے نام سے اردو ادب سے تعلق رکھنے والی معروف شخصیات کے تاثرات کو دن بھر مختلف پروگرامز میں نشر کیا گیا اور ساتھ ہی بیاد رفتگاں کے حوالے ہی سے فیچر اب کے ہم بچھڑے کو ریڈیو پاکستان لاہور کے آواز خزینہ سے ٹرانسمیشن کا حصہ بنایا گیا جس کے پروڈیوسر سید عبدل ماجد تھے جبکہ پروگرام تم تو شاعر ہو فراز میں ماضی کے مختلف مشاعروں سے احمد فراز کی غزلوں اور نظموں کا اقتباس شامل تھا جسے پروڈیوسر کاشف غوری نے تیار کیا۔ ٹرانسمیشن کا اختتام ایف ایم 93اورمیڈیم ویو 630 کے نیٹ ورک سے لائیو پروگرام سر سنگیت سے ہوا جس میں احمد فراز کی غزلیں اور گیت نامور گلوکاروں کی آواز میں نشر کیے گئے۔

جبکہ دھنک ایف ایم 94 کے پروگرام یادش بخیر میں کبھی خوابوں میں ملیں کے عنوان پر ٹرانسمیشن کا آخری پروگرام 12بجے شب تک جاری رہا جس کے پروڈیوسر ز عابس رضا کاظمی اور ظہیر عباس تھے ۔احمد فراز کے حوالے سے نشر کی جانے والی خصوصی ٹرانسمیشن کی نگران اعلی اسٹیشن ڈائریکٹر ریڈیو پاکستان لا ہور نزاکت شکیلہ تھیں۔

مزید :

کلچر -