عام انتخابات سمیت کابینہ میں شامل چند افراد پر تحفظات ہیں ، مشتاق احمد

عام انتخابات سمیت کابینہ میں شامل چند افراد پر تحفظات ہیں ، مشتاق احمد

سخاکوٹ (نمائندہ پاکستان) جماعت اسلامی خیبر پختونخواہ کے صوبائی آمیر اور سنیٹر مشتاق احمد خان نے کہا ہے کہ عام انتخابات سمیت کابینہ میں شامل چند افراد پر تحفظات ہیں لیکن اس کے باوجو د تعمیری اپوزیشن کا کردار ادا کر یں گے اور حکومت کے ہر اچھے اقدام کی پارلیمنٹ کے اندر اور پارلیمنٹ سے باہر حمایت اور بُرے کام کی مخالفت کرتے رہیں گے ۔ مخصوص جماعت کی اقتدار میں آنے کے لئے میڈیااور سوشل میڈیا پر بلین سے زائد روپے خرچ کئے گئے جبکہ کئی ٹی وی چینلز ، اینکر پرسنز ، کالم نگاروں اور تجزیہ نگاروں کو خریدا گیا ۔ ملک بھر میں جماعت اسلامی کے دو ہزار سے زائد آفراد اسمبلی ، ضلع و تحصیل کونسل اور سینیٹ سمیت مختلف عہدوں پر فائز ہیں لیکن کوئی مائی کا لال ان پر ایک روپے کی کرپشن کا الزام نہیں لگا سکتا ۔ جماعت اسلامی ایک جمہوری جماعت اور اس میں عہدے ڈی این اے ٹیسٹ اور رشتوں کے بنیاد پر نہیں دئیے جاتے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے دارلعلوم تعلیم القرآن سخاکوٹ میں جماعت اسلامی کے زیر اہتمام گرینڈ عید ملن پارٹی اور جماعت اسلامی کے یوم تاسیس کے موقع پر اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس دوران انہوں نے جماعت اسلامی کے تاریخ اور اکابرین کے قربانیوں پر تفصیلی روشنی ڈالی ۔اس موقع پر ضلعی آمیر شیخ القرآن مولانا جمال الدین ، سابق ایم این اے سید بختیا رمعانی ، سابق صوبائی وزیر شاہ راز خان ، کسان بورڈ کے صوبائی صدر حاجی رضوان اﷲ ، نگران آمیرروح الامین ، جماعت اسلامی کے تحصیل آمیر مولانا محمد طیب ، قیم نثار احمد قاضی اور احترام گل سمیت دیگر مقررین نے خطاب کیا جبکہ اس موقع پر محمد افضل خان اور جمعیت علماء اسلام کے رہنماء حق نواز خان ایڈوکیٹ بھی موجود تھیں ۔ صوبائی آمیر سنیٹر مشتاق احمد خان نے کہا کہ 25جولائی کے دن خواتین پولنگ سٹیشنوں سمیت فارم45کے مد میں جو کچھ ہوا اس پر صوبائی نگران وزیر اعلیٰ سمیت دیگر نگران حکام نے بھی تحفظات ظاہر کئے تھیں جبکہ بی بی سی نے اپنے تبصرے میں اسے مشرقی اریجنڈ میرج قراردیا تھا جس سے الیکشن پر ہمارے تحفظات درست ثابت ہوئے ہیں ۔ مشتاق احمد خان نے کہا کہ مدینے کی ریاست کے قیام کے لئے جماعت اسلامی کوششیں کر رہی ہے اس لئے اگرموجودہ حکومت نے پاکستان میں مدینے کی ریاست کی طرز حکمرانی کے لئے جدوجہد کی تو ہم ہر نیک اور اچھے کام میں ان کا ساتھ دینگے کیونکہ مدینے کی ریاست کے قیام میں ہی تمام مسائل کا حل موجود ہے تاہم کسی بھی غیر شرعی ، غیر آئینی اور بُرے کام کی مخالفت پارلیمنٹ کے اندر اور پارلیمنٹ سے باہر کرتے رہیں گے ۔ صوبائی آمیر نے کہا کہ مدینے کی ریاست میں سُپریم لاء قرآن و سنت کے بالادستی اور رولز آف لاء کی ہو گی جس میں کسی شخص کا استثنیٰ حاصل نہیں ہو گی بلکہ سب کے لئے قانون برابر ہو گااور معاشی طور پر حالت ایسی ہو جہاں زکواۃ لینے والا کوئی نہ ہواور کرپشن سے پاک صاف معاشرہ ہو ۔ مشتا ق احمد خان نے کہا کہ ہالینڈ میں پیغمبر محمدﷺ کے شان میں گستاخانہ خاکوں اور کارٹون پر سینٹ میں قرارداد جمع کرائی ہے اور انشاء اﷲ اگلے اجلاس میں اس قرارداد کو پاس کرائینگے ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پیغمبر محمد ﷺ کے شان میں گستاخی اور توہین آمیز کارٹون در اصل ہمارے نظریاتی سرحدپر حملہ ہے جس کی ہم پُر زور مذمت کرتے ہیں اور حکومت پاکستان سے مطالبہ کرتے ہیں کہ فوری طور پر او آئی سی کا اجلاس بلاکر تمام مسلم ممالک کو متحد کیا جائے اور پاکستان میں قائم ہالینڈ کا سفارتخانہ فی الفور بندکرکے ہالینڈ کے مصنوعات پر پابندی لگاتے ہوئے اس کا بائیکاٹ کریں۔ انہوں نے مذید کہا کہ عالم اسلام کے تمام وسائل پرعالم کفر قبضہ کرنا چاہتی ہے اس لئے غیردینی قوتیں عالم اسلام پر حملہ آور ہو رہے ہیں لیکن ہم اسلام اور پاکستان کی خاطر کسی قربانی سے دریغ نہیں کرینگے اور اپنے کمزوریوں پر نظر ڈالتے ہوئے اپنا محاسبہ خود کرینگے جو کہ ایک زندہ کارکن کی ذمہ داری کی علامت ہے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...