پرویزرشیدسے توقع نہیں تھی کہ میرے صدارتی امیدوار ہونے پر اعتراض کریں گے،محسوس ہوا کہ ان کی روش کچھ جاگیردارنہ ہے:اعتزازاحسن

پرویزرشیدسے توقع نہیں تھی کہ میرے صدارتی امیدوار ہونے پر اعتراض کریں ...
پرویزرشیدسے توقع نہیں تھی کہ میرے صدارتی امیدوار ہونے پر اعتراض کریں گے،محسوس ہوا کہ ان کی روش کچھ جاگیردارنہ ہے:اعتزازاحسن

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پیپلزپارٹی کے سینئررہنما اعتزازاحسن نے کہا ہے کہ پرویزرشیدباشعورہیں دھیمی آواز میں بات کرتے ہیں ان سے توقع ہی نہیں تھی کہ وہ میرے صدارتی امیدوار ہونے پر اعتراض کریں گے،ن لیگ کے رہنماوں کاکہناہے پرویزرشیدکی انفرادی رائے ہے پارٹی موقف نہیں۔

صدارتی امیدوار کے لئے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کے بعدمیڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پیپلزپارٹی کے سینئررہنما اعتزازاحسن کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کی دیگر جماعتوں کی جانب سے اعتراض لگایا گیا ہے کہ پیپلز پارٹی نے میرا نام مشاورت کے بغیر دیا ہے جبکہ پی پی کے جس اجلاس میں میرے نام پراتفاق ہواتھا اس میں،میں شامل نہیں تھااور پیپلزپارٹی نے دیگر جماعتوں سے مشاورت سے پہلے میرانام کااعلان نہیں کیاتھا،میں 1964سے سیاست میں ہوں ، ایوب خان کے خلاف مظاہر ے میں گرفتارہوا،قربانیاں دینا پیپلز پارٹی کا ہی خاصہ رہا ہے ۔مسلم لیگ (ن)کے رہنما پرویز رشید کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ مجھے علم نہیں (ن)کاکیااعتراض ہے،ایک اعتراض پرویزرشیدنے کیاہے، پرویزرشیدباشعورہیں دھیمی آواز میں بات کرتے ہیں ،ان سے توقع ہی نہیں تھی کہ وہ ایسا اعتراض کریں گے،محسوس ہوا کہ پرویز رشید کی روش کچھ جاگیردارنہ ہے ،حالانکہ پرویز رشید کے اعتراض کا جواب ن لیگ کے بہت سے رہنماوں نے دے دیا ہے،ن لیگ کے رہنماوں کاکہناہے پرویزرشیدکی انفرادی رائے ہے پارٹی موقف نہیں۔

واضح رہے کہ اعتزاز احسن صدارتی انتخاب کے لئے پیپلز پارٹی کے امیدوارہیں جبکہ دیگر اپوزیشن کی تمام سیاسی جماعتوں نے مولانا فضل الرحمان کو صدارتی امیدوار نامزد کر رکھا ہے ۔

مزید :

قومی -سیاست -علاقائی -اسلام آباد -