ایران اقوام متحدہ کو  ”خفیہ جوہری تنصیبات“تک رسائی دینے کے لئے تیار ،بڑی خبر آگئی

ایران اقوام متحدہ کو  ”خفیہ جوہری تنصیبات“تک رسائی دینے کے لئے تیار ،بڑی ...
ایران اقوام متحدہ کو  ”خفیہ جوہری تنصیبات“تک رسائی دینے کے لئے تیار ،بڑی خبر آگئی

  

 تہران (ڈیلی پاکستان آن لائن) ایران نے اقوام متحدہ کے ادارے انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی (آئی اے ای اے) کے ساتھ ایک ماہ کی کشمکش کے بعد دو سابقہ خفیہ ایٹمی تنصیبات تک رسائی دینے پر اتفاق کرلیا۔

نجی ٹی وی چینل "ڈان نیوز " کے مطابق الجزیرہ نے اپنی رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ ایران اقوام متحدہ کے ادارے  انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی  کو  ”خفیہ جوہری تنصیبات“تک رسائی دینے کے لئے تیار ہو گیا ہے، دونوں فریقین کے درمیان معاہدہ آئی اے ای اے کے سربراہ رافیل گروسی کے دورہ تہران کے دوران اعلی سطح کے مذاکرات کے نتیجے میں ہوا۔رافیل گروسی اور ایرانی جوہری ایجنسی کے سربراہ علی اکبر صالحی نے مشترکہ بیان میں کہا کہ ایران رضاکارانہ طور پر آئی اے ای اے کو ان کی جانب سے بتائے گئے دو مقامات تک رسائی دے گا۔بیان میں کہا گیا ہے کہ 'آئی اے ای اے کو رسائی دینے کے لیے تاریخوں اور مصدقہ سرگرمیوں پر اتفاق کرلیا گیا ہے۔آئی اے ای اے نے کہا کہ بدلے میں ایران سے اس سے متعلق کوئی سوال نہیں پوچھا جائے گا۔

یاد رہے کہ آئی اے ای اے کے سربراہ رافیل گروسی نے 2015 میں ایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان جوہری معاہدے پر دستخط سے کچھ روز قبل ہی ایران کا دورہ کیا تھا۔ایران کے ساتھ اس معاہدے کو جوائنٹ کمپری ہینسو پلان آف ایکشن (جے سی پی اواے) کا نام دیا گیا تھا، جس کے تحت ایران جوہری پروگرام کو محدود کرنے پر اتفاق کیا تھا۔عالمی طاقتوں سے معاہدے میں ایران نے وعدہ کیا تھا کہ جوہری ہتھیار بنانے کے کام کو جاری نہیں رکھے گا، جس کے جواب میں ان پر عائد بین الاقوامی پابندیاں اٹھالی گئی تھیں۔ایران کو اپنا تیل اور گیس دنیا بھر میں کسی بھی ملک کو برآمد کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔بعد ازاں جب امریکا میں ڈونلڈ ٹرمپ صدر منتخب ہوئے اور 2018 میں انہوں نے ایران سے معاہدہ ختم کرنا کا یک طرفہ اعلان کیا اور ایران پر معاشی پابندیاں بحال کردی تھیں۔

مزید :

بین الاقوامی -